وزیر معدنی ترقی کا دورہ محکمہ معدنیات، سرمایہ کا روں کیلئے فراہم کردہ سہولیات کا جائزہ

وزیر معدنی ترقی کا دورہ محکمہ معدنیات، سرمایہ کا روں کیلئے فراہم کردہ ...

  

پشاور( سٹاف رپورٹر )خیبر پختونخوا کی وزیر معدنی ترقی اور محنت انیسہ زیب طاہرخیلی نے جمعرات کے روز پشاور میں ڈائریکٹوریٹ جنرل معدنیات کا اچانک دورہ کیا اور وہاں پر آن لائن نظام کے تحت معدنی شعبے میں سرمایہ کاری کرنے اور معدنی لائسنسوں کے حصول کیلئے قائم درخواستوں کی وصولی کے سہولیاتی سنٹر کا معائنہ کیا۔انہوں نے اس موقع پر سرمایہ کاروں کو فراہم کی جانے والی سہولیات کا جائزہ لیا اور ان کو اطمینان بخش قرار دیا۔ ڈائر یکٹر جنرل معدنیا ت فضل واحد ، چیف کمشنر مائنز زیارت خان، چیف انسپکٹر مائنز فضل رازق، ڈپٹی ڈائریکٹر یعقوب نواز اور معدنیات کے دیگر افسران اور عملہ بھی اس موقع پر موجود تھا۔دوران معائنہ صوبائی وزیر کو آن لائن نظام کے تحت درخواستوں کی وصولی کی پیش رفت کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیاکہ درخواستوں کی وصولی کے آغاز کے بعد تین دنوں کے دوران تقریباً 32کمپنیوں اور 205سرمایہ کاروں نے انفرادی حیثیت میں لیزوں کے لائسنسوں کیلئے اپنی درخواستیں دیں ہیں جبکہ 217افراد نے اپنے آن لائن اکاؤنٹس بنائے ہیں اور امید ہے کہ رواں مہینے آن لائن درخواستوں کی تعداد ہزاروں میں ہو گی ۔اس موقع پر صوبائی وزیر نے محکمہ کے اعلیٰ افسران کو ہدایات دیں کہ آن لائن درخواستوں کے اجراء کے بعد آئندہ کے لائحہ عمل کیلئے مکمل پلان مرتب کیا جائے اور اس ضمن میں لیز ہولڈرز کیلئے شفافیت پر مبنی چالان سسٹم وضع کیا جائے تاکہ کسی بھی قسم کی غیر قانونی مائننگ کے ارتکاب کی گنجائش باقی نہ رہے اور سارا کام شفاف انداز سے ہو۔انہوں نے ہدایت کی کہ موزوں مقامات پر تمام سہولیات سے آراستہ منرل چیک پوسٹوں کے قیام کیلئے فوری انتظامات کئے جائیں جہاں پر جدید کمپیوٹرائزڈ نظام کے ساتھ دیگر تمام لوازمات موجود ہوں جنہیں مقامی پولیس کی مدد بھی حاصل ہو اور وہاں پر چوبیس گھنٹے چیکنگ یقینی ہو۔صوبائی وزیر نے کہاکہ معدنی چیک پوسٹوں پر سیکورٹی کے نظام کو بہتر کرنے کی غرض سے منرل گارڈز کی تعدا د کو بڑھایا جائے گا ۔انہوں نے دلی خواہش ظاہرکی کہ مقامی آبادی لیزوں کے حصول کیلئے خود پہل کریں اور دوسروں کے آلہ کار بنے کی بجائے اپنے علاقوں میں معدنی لیزوں کے لائسنسز خود حاصل کریں ۔ اس طرح مقامی افراد نہ صرف اپنے علاقوں میں معدنی شعبے کی ترقی و فروغ میں اپنا احسن کردار ادا کریں گے بلکہ اس سے مقامی آبادی کی معاشی حالت بھی بہتر ہو سکے گی اور انہیں محرومی کا احساس بھی نہیں ہوگا۔اس دوران محکمہ معدنیات میں موجود متعد د سرمایہ کار وں نے معدنی لائسنسوں کے نئے طریقہ کار کو سراہتے ہوئے اسے صوبائی حکومت اور صوبائی وزیر معدنیا ت کا ایک احسن کارنامہ قرار دیا۔

مزید :

پشاورصفحہ اول -