پانامہ پیپرز کیس،جماعت اسلامی پاکستان کا سپریم کورٹ میں اضافی ٹی او آرز جمع کرانے کا فیصلہ ،سراج الحق نے وکلاء سے مشاورت کے بعد ہدایات جاری کر دیں

پانامہ پیپرز کیس،جماعت اسلامی پاکستان کا سپریم کورٹ میں اضافی ٹی او آرز جمع ...
 پانامہ پیپرز کیس،جماعت اسلامی پاکستان کا سپریم کورٹ میں اضافی ٹی او آرز جمع کرانے کا فیصلہ ،سراج الحق نے وکلاء سے مشاورت کے بعد ہدایات جاری کر دیں

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) جماعت اسلامی پاکستان نے سپریم کورٹ میں زیر سماعت پانامہ پیپرز کیس میں اضافی ٹی او آرز جمع کرانے کا فیصلہ کر لیا ،متفرق درخواست میں سپریم کورٹ سے استدعا کی جائے گی کہ ٹی او آرز میں ان افراد کو بھی شامل کرتے ہوئے بلا تفریق احتساب کیا جائے جن کے نام پانامہ پیپرز میں آئے ہیں اور جنہوں نے قرضے معاف کراتے ہوئے اندرون و بیرون ملک اثاثے بنائے اور چھپائے ہیں ۔

پانامہ پیپرز کیس میں میں جماعت اسلامی پاکستان کے وکیل اور سپریم کورٹ بار ایسوسی ایشن کے سیکرٹری اسد منظور بٹ نے سینیٹر سراج الحق سے اسلام آباد میں ملاقات کی اور سپریم کورٹ میں زیر سماعت پانامہ پیپرز کیس کے حوالے سے تفصیلی گفتگو کی۔قات میں فیصلہ کیا گیا کہ سپریم کورٹ میں ایک متفرق درخواست دائر کی جائے جس میں اضافی TORs جمع کرائے جائیں گے، جس کے تحت سپریم کورٹ سے استدعا کی جائے گی کہ احتساب بلاتفریق تمام فریقوں کے ان افراد کا کیا جائے جنہوں نے قرضے معاف کرائے ہیں یا پانامہ لیکس میں جن کا نام آیا ہے، یا وہ اندرون و بیرون ملک کرپشن اور کرپٹ practices اور اثاثہ جات کو چھپانے میں ملوث ہیں، ان کو بھی TORs میں شامل کیا جائے۔ دوران ملاقات عدالت عظمیٰ سے اس امید کا اظہار بھی کیا گیا کہ وہ ایسا فیصلہ کرے گی جو اس ملک میں کرپشن کے خاتمہ کے حوالے سے ایک مثال بنے اور اس کی بنیاد پر کرپشن کو ملک میں کبھی پنپنے کا موقع نہ مل سکے۔

نیز سپریم کورٹ سے یہ بھی استدعا کی جائے گی کہ ایک ایسا بااختیار، خودمختار اور طاقت ور کمیشن تشکیل دیا جائے، جس کو ملک میں کرپشن کے خاتمے کے حوالے سے بلاامتیاز کارروائی کے وسیع اختیارات حاصل ہوں۔ جہاں حکمرانوں اور دیگر بڑے بڑے کرپٹ افراد کی کرپشن کے حوالے سے کوئی بھی شہری اپنی درخواست دائر کرسکے۔ سینیٹر سراج الحق نے اپنے وکیل محمد اسد منظور بٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم کسی بھی قسم کی جانب داری سے کام نہیں لیں گے۔ جنہوں نے عوام کے حقوق پر ڈاکہ ڈالا ہے اور قوم کے ہر بچے کو ایک لاکھ سے زائد کا مقروض کیا ہے، اس کے خلاف ملک میں موجود تمام فورمز پر آواز اٹھائیں گے، بیرونی ممالک میں ناجائز اور غیر قانونی طریقے سے رکھی گئی تمام رقوم کی چھان بین کی جائے گی، چاہے ان کا تعلق کسی بھی فرد یا جماعت سے ہو۔

مزید :

قومی -