’خواتین کے بارے میں یہ بات کرنے کی بھی اجازت نہیں‘ سعودی حکومت نے فیصلہ سنادیا، خواتین کو رُلا کر رکھ دیا

’خواتین کے بارے میں یہ بات کرنے کی بھی اجازت نہیں‘ سعودی حکومت نے فیصلہ ...
’خواتین کے بارے میں یہ بات کرنے کی بھی اجازت نہیں‘ سعودی حکومت نے فیصلہ سنادیا، خواتین کو رُلا کر رکھ دیا

  

جدہ(مانیٹرنگ ڈیسک) عالمی برادری کی طرف سے سعودی حکومت پر خواتین کے حقوق کے لیے دباﺅ ڈالا جاتا ہے اور عالمی تنظیمیں مطالبہ کرتی ہیں کہ مملکت میں خواتین کو ڈرائیونگ کا حق دیا جائے، تاہم اب سعودی عرب نے اس حوالے سے ٹکا سا جواب دے دیا ہے۔ برطانوی اخبار دی انڈیپنڈنٹ کی رپورٹ کے مطابق سعودی عرب کی مجلس شوریٰ نے خواتین کو ڈرائیونگ کا حق دینا تو درکنار، اس معاملے پر غور کرنے سے بھی انکار کر دیا ہے اور کہا ہے کہ خواتین کو اس معاملے پر بات کرنی کی اجازت بھی نہیں دی جا سکتی۔ اس وقت دنیا میں سعودی عرب واحد ملک ہے جہاں خواتین کو گاڑی چلانے کی اجازت نہیں۔

پہلی مرتبہ شاہ سلمان کی بیٹی سمیت سعودی شہزادیاں اتنی بڑی تعداد میں ایک اور عرب ملک پہنچ گئیں کیونکہ۔۔۔

رپورٹ کے مطابق مجلس شوریٰ میں تجویز پیش کی گئی تھی کہ خواتین کے گاڑی چلانے پر عائد پابندی کے خاتمے کے متعلق مختلف سوالات پر غور کر لیا جائے اوراس حوالے سے متفقہ تجاویز مرتب کر دی جائیں۔ اس تجویز کو زیربحث لانے کے لیے ووٹنگ ہوئی لیکن 50فیصد لازمی ووٹ نہ ملنے پر اس معاملے پر غور کرنے کی تجویز بھی رد کر دی گئی۔ مجلس شوریٰ کل 150اراکین پر مشتمل ہے جس میں 30خواتین ہیں۔مجلس کوئی بھی قانون بنا کر فرماں روا کو پیش کر سکتی ہے، اسے از خود منظور یا لاگو نہیں کر سکتی۔خواتین کو مجلس میں نمائندگی 2013ءمیں مرحوم فرماں روا شاہ عبداللہ نے دی تھی۔

مزید :

عرب دنیا -