چوہدری شوگر ملز کیس ، لاہور ہائیکورٹ کا مریم نواز کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم

چوہدری شوگر ملز کیس ، لاہور ہائیکورٹ کا مریم نواز کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم
چوہدری شوگر ملز کیس ، لاہور ہائیکورٹ کا مریم نواز کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن ) لاہور ہائیکورٹ نے چوہدری شوگر ملز کیس میں مریم نوازشریف کی درخواست ضمانت منظو ر کرتے ہوئے ایک ایک کروڑ روپے کے دو مچلکے جمع کروانے کا حکم جاری کر دیاہے.

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کی جسٹس علی باقر نجفی کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے چوہدری شوگر ملز کیس میں درخواست ضمانت پر محفوظ فیصلہ سنایا ۔ مریم نوازشریف کی درخواست ضمانت پر فیصلہ 31 اکتوبر کو محفوظ کیا گیا تھا ۔عدالت نے مریم نوازشریف کو ایک ایک کروڑ روپے کے دو مچلکوں کے علاوہ پاسپورٹ اور علیحدہ سے 7 کروڑ روپے جمع کروانےکا حکم دیاہے۔

عدالت کا مریم نوازشریف ضمانت منظور کرنے کا تحریری فیصلہ 22 صفحات پر مشتمل ہے ،فیصلے میں کہا گیاہے کہ ملزمہ پر 2 ارب منی لانڈرنگ کاالزام لگایاگیا، نصیرعبداللہ لوتھانے شیئرزکیلئے رقم بھیجی،چودھری شوگرملزکونامزدنہیں کیاگیاتھا، چودھری شوگرملزکے اکاو¿نٹس استعمال ہوتے رہے، پناماپیپرزمیں چودھری شوگرملزمرکزی مدعانہیں رہا، عبداللہ ناصرکابیان ملزمہ کی عدم موجودگی میں ریکارڈہوا، نصیرعبداللہ کاتصدیق شدہ بیان بھی پیش نہیں کیاگیا، دیگرغیرملکیوں کے بیانات بھی ریکارڈنہیں، ملزمہ کے 7 کروڑنکلوانے کو جرم قرارنہیں دیاجاسکتا اورگرفتاری سزاکے طورپراستعمال نہیں ہوسکتی۔عدالت نے ضمانتی مچلکے ایڈمن جج کے روبرو جمع کروانے کی ہدایت کی ہے ۔

نیب نے مریم نوازشریف کو 8 اگست کو چوہدری شوگر ملز کیس میں گرفتار کیا تھا جس کے بعد مریم 48 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کی تحویل میں رہیں جس کے بعد انہیں جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیج دیا گیا تھا ۔یاد رہے کہ مریم نواز کے والد نوازشریف اس وقت سروسز ہسپتال میں زیر علاج ہیں جس پر مریم نواز کی جانب سے والد کی تیمارداری کیلئے24 اکتوبر کو درخواست ضمانت لاہور ہائیکورٹ میں دائر کی گئی جس پر عدالت نے 31 اکتوبر دلائل مکمل ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا تھا جو کہ آج سنا دیا گیاہے ۔

یہاں یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ نے نوازشریف کی العزیزیہ ریفرنس میں سزا کو معطل کرتے ہوئے 8 ہفتوں کی ضمانت منظور کر لی تھی جبکہ چوہدری شوگر ملز کیس میں بھی لاہور ہائیکورٹ نے نوازشریف کو طبی بنیادوں پر ضمانت پر رہا کرنے کا حکم جاری کر دیا تھا ۔

نوازشریف کو طبیعت ناساز ہونے پر 14 روز قبل نیب کی جانب سے سروسزہسپتال منتقل کیا گیا ، اس وقت ان کے پلیٹ لیٹس میں خطرناک حد تک کم ہو چکے تھے ۔ میڈیکل بورڈ نے نوازشریف کی بیماری کی تشخیص کرنے کے بعد ان کا علاج شروع کیا اور اب اطلاعات ہیں کہ ان کی صحت پہلے سے بہتر ہو چکی ہے ۔

مزید : Breaking News /اہم خبریں /قومی