ہائیکورٹ نے لاہور میں بلند و بالا عمارتوں کی تعمیرا ت کو عدالتی فیصلے سے مشروط کر دیا 

ہائیکورٹ نے لاہور میں بلند و بالا عمارتوں کی تعمیرا ت کو عدالتی فیصلے سے ...

  

          لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہور ہائیکورٹ کے جسٹس شاہدکریم نے لاہور میں بلند و بالا عمارتوں کی تعمیرات کوعدالتی فیصلے سے مشروط کردیا فاضل جج نے اس سلسلے میں دائر درخواست پر ایل ڈی اے کونوٹس جاری کرتے ہوئے 15نومبر تک جواب طلب کرلیا فاضل جج نے قراردیاکہ اگر بلند وبالا عمارتوں کی تعمیرات نہ روکی گئیں تو گرا دی جائیں گی،عدالت کوبتایاجائے بلند بالا عمارتوں کے متعلق قانون سازی میں ماحولیات کو مدنظر کیوں نہیں رکھا گیا؟درخواست گزاروں کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے موقف اختیارکررکھاہے کہ ایل ڈی اے نے شہرکے رہائشی علاقوں میں پندرہ منزلہ کمرشل عمارتوں کی تعمیرات کاقانون بنایا،قانون سازی کرتے ہوئے ماحولیات کو مدنظر نہیں رکھا گیا،تنگ گلیوں میں بھی 160فٹ بلند و بالا عمارتوں کی تعمیرات کی اجازت دے دی گئی،بلند وبالا عمارتوں کی تعمیرات کی اجازت کا قانون غیر آئینی اور بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہے،عدالت سے استدعاہے کہ شہر میں بلند وبالا عمارتوں کی تعمیرات سے متعلق ایل ڈی اے ریگولیشنز کو کالعدم قراردیاجائے۔

لاہور ہائیکور

مزید :

علاقائی -