ارشد شریف کے قتل سے متعلق پاکستانی تحقیقاتی ٹیم نے کینیا میں میزبان بھائیوں کا انٹرویو کر لیا، نجی ٹی وی کا دعویٰ

ارشد شریف کے قتل سے متعلق پاکستانی تحقیقاتی ٹیم نے کینیا میں میزبان بھائیوں ...
ارشد شریف کے قتل سے متعلق پاکستانی تحقیقاتی ٹیم نے کینیا میں میزبان بھائیوں کا انٹرویو کر لیا، نجی ٹی وی کا دعویٰ

  

نیروبی (ڈیلی پاکستان آن لائن ) 23 اکتوبر کو کینیا میں قتل ہونے والے پاکستانی صحافی ارشد شریف کے قتل کیس کی تحقیقات کیلئے پاکستان سے گئی ٹیم نے   ارشد شریف کے میزبان بھائیوں سے انٹر ویو  کر لیا ہے۔ 

 نجی ٹی وی چینل "جیو نیوز"کے مطابق ایف آئی اے کے ڈائریکٹر اطہر واحد اور آئی بی کے ڈپٹی ڈائریکٹر عمر شاہد حامد نے خرم احمد اور وقار احمد سے انٹرویو کیے ہیں، پولیس نے وقار احمد اور خرم احمد سے ارشد شریف کے اپارٹمنٹ کی سی سی ٹی وی وڈیو طلب کر لی ہے،ارشد شریف کے فون اور آئی پیڈ کے بارے میں بھی وضاحت طلب کی گئی ہے،  اس کے علاوہ ان افراد کے نام اور رابطوں کی تفصیل بھی طلب کی گئی ہے جنھوں نے  ارشد شریف کو اسپانسر کرنے کا کہا تھا ،کیونکہ ارشد شریف کا سپانسر لیٹر کینیا میں مقیم پراپرٹی ڈیویلپر وقار احمد نے بھیجا تھا جو کہ خرم احمد کا بھائی ہے، کینیا میں ارشد شریف کے میزبان دونوں بھائیوں سے شوٹنگ رینج پر موجود انسٹرکٹر  اور دیگر عملے  کی  تفصیلات بھی طلب کر لی  گئی ہیں ۔

 رپورٹ کے مطابق پاکستانی تفتیش کاروں کا بھیجا گیا خط پاکستانی سفارتی حکام اور کینیا کے مختلف اداروں کے پاس بھی موجود ہے، واضح رہے کہ 23اکتوبر کو جب ارشد شریف کو گولیاں ماری گئیں تب خرم احمد ان کی گاڑی چلا رہا تھا ،  خرم کے بھائی وقار کا کہنا تھا کہ ڈنر کے بعد ارشد شریف خرم کے ساتھ چلے گئے اور نصف گھنٹے بعد فائرنگ کی اطلاعت ملی تھی ، جبکہ کینیا پولیس نے ارشد شریف کی موت کو شناخت کی غلطی قرار دے کر افسوس کا اظہار کیا تھا 

مزید :

اہم خبریں -قومی -