گرین گیسز تخفیف: پاکستان نے 40 ارب ڈالر مانگ لئے

گرین گیسز تخفیف: پاکستان نے 40 ارب ڈالر مانگ لئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک) پاکستان کے پیرس معاہدہ اور اقوام متحدہ کے فریم ورک کنونشن برائے موسمیاتی تبدیلی کی رو سے عالمی درجہ حرارت میں تیزی سے اضافہ روکنے کیلئے مکمل عزم کا اظہار کرتے ہوئے واضح کر دیا پاکستان 2030 ءتک گلوبل وارمنگ کا باعث بننے والی گرین ہاﺅس گیسز کے اخراج میں 20 فیصد تک تخفیف کیلئے تیار ہے تاہم شرط ہے کہ ترقی یافتہ ممالک اس کے عوض پاکستان کو 40 ارب ڈالر گرانٹ فراہم کر یں تاکہ پاکستان متبادل ٹیکنالوجی کو استعمال میں لائے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان نے اقوام متحدہ اور امراءممالک پر واضح کر دیا پاکستان موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے بری طرح متاثر ہونیوالے ملکوں میں چھٹے نمبر پر ہے اور موسمیاتی تبدیلی کے منفی اثرات سے نمٹنے کیلئے سالانہ 7 سے 14 ارب امریکی ڈالر کی ضرورت ہے، پاکستان کی جانب سے اقوامِ متحدہ کے کلائمیٹ چینچ سیکرٹریٹ میں جمع شدہ قومی آئی این ڈی سی رپورٹ میں ظاہر کردہ گرین ہاﺅس گیسز انونٹری کے مطابق پاکستان میں گزشتہ 22 برس کے دوران گلوبل وارمنگ کا سبب بننے والی گیسز کے اخراج کی شرح میں 123 فیصد اضافہ ہوا، پاکستان گیسز اخراج کی شرح میں 123 فیصد اضافہ ہوا، پاکستان گیسز اخراج کی شرح میں سالانہ 3.9 فیصد اضافہ کے تناسب سے ہر سال 10 ملین ٹن گیسز خارج کر رہا ہے، پاکستان میں اسی رفتار سے گیسز اخراج کا سلسلہ جاری رہا تو 2030 تک اضافہ کی شرح میں 300 فیصد اضافہ کے تناسب سے کل گیسز کے اخراج کی مقدار 1630 ملین ٹن تک پہنچ جائے گی، پاکستان دنیا میں مجموعی گیسز کے اخراج کا محض 0.8 فیصد خارج کر رہا ہے اور گیسز خارج کرنیوالے ملکوں میں 135 ویں نمبر پر ہے۔

مزید : اسلام آباد