کئی سال گزر گئے ،پاکستانی نژاد سویڈش خاتون اپنی جائیداد پر قبضہ ختم کرانے میں ناکام

کئی سال گزر گئے ،پاکستانی نژاد سویڈش خاتون اپنی جائیداد پر قبضہ ختم کرانے ...

لاہور ( خصوصی رپورٹ ) پاکستانی نژاد سویڈن کی رہائشی خاتون کئی سال گزر جانے کے باوجود اپنی جائداد پر ناجائز قبضہ ختم کرانے کے لئے حکومتی اداروں سے انصاف حاصل نہ کرسکی۔تفصیلات کے مطابق گلشن راوی کی خاتون ثمینہ نوید نے شادی کے بعد 2001 میں پاکستان سے ہجرت کرکے سویڈن میں سکونت اختیار کر لی۔ 2009میں جب وہ اپنی والدہ کی وفات پر وطن واپس آئیں تو معلوم ہوا کہ ان کی وراثتی جائیداد ان کے بھائی اسلم پرویز بٹ اور بہن شہناز اخترنے قبضہ مافیا اور سرکاری افسران کی ملی بھگت سے جعلی دستاویزات تیار کرکے فروخت کردی ہے۔ ثمینہ نے بتایا کہ ان کے والدصادق بٹ کی 1973میں وفات کے بعد سے خاندانی جائیداد کی دیکھ بھال ان کے بھائی اسلم پرویز بٹ کر رہے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ میرے حصے کی سیکڑوں کنال اراضی میں سے 27کنال موضع بھانو چک میں ایک بااثر سیاسی شخصیت کو، 20 کنال باٹاپور جبکہ درجنوں کنال زمین ڈوگراں کلاں اور موضع واہگہ میں بھی جعلسازی کرکے فروخت کردی گئی۔ ثمینہ کا کہنا تھا کہ اُس وقت ان کے بھائی ملزم اسلم بٹ کوتھانہ شمالی چھاؤنی کی پولیس نے میری جائیداد کو دھوکہ دہی سے فروخت کرنے کے جرم میں عدالتی حکم پر گرفتار کر لیا تھا۔بعد میں اسلم 25کنال قطعہ اراضی میرے نام پر منتقل کرنے کا بیان حلفی جمع کرا کے رہائی پانے میں کامیاب ہوگیا تھا۔ انھوں نے بتایا کہ حلف کی خلاف ورزی کرنے کی بنا پر اسلم بٹ کو عدالت کی جانب سے اشتہاری قرار دیا چکا تھا۔ ثمینہ نے مزید بتایا کہ وہ اپنے مقدمے کی پیروی کیلئے 2016میں دوبارہ پاکستان واپس آئیں مگر اس مرتبہ پولیس نے اسلم بٹ کو گرفتار کرنے سے گریز کیا جس پر انھوں نے دسمبر 2016میں لاہور میں سی سی پی او کے دفتر باہر دھرنا بھی دیا جس کے بعد پولیس نے ملزم کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا۔ ثمینہ کا کہنا تھا کہ جرم ثابت ہونے کے باوجود بھی وہ اپنی جائیداد حاصل کرنے میں ناکام ہیں اور اس سلسلے میں کوئی بھی حکومتی ادارہ ان سے تعاون نہیں کررہا ہے۔

جائیداد پر قبضہ

مزید : علاقائی