متروکہ وقف املاک بورڈ قبضہ مافیا کیخلاف کارروائی کے نوٹس جاری کرنے تک محدود

متروکہ وقف املاک بورڈ قبضہ مافیا کیخلاف کارروائی کے نوٹس جاری کرنے تک محدود

ملتان (سٹی رپورٹر)متروکہ وقف املاک بورڈ قبضہ مافیا کے خلاف کاروائی شروع نہ کر سکا، ملتان ڈویڑن کی 123 کنال سے زائد کمرشل و زرعی اراضی گزشتہ 56 سال سے قابض مافیا کے نرغے میں ہے۔ تین کروڑ سے زائد آمدنی کی حامل اس اراضی سے محروم رہنے کے با وجود متروکہ وقف (بقیہ نمبر47صفحہ7پر )

املاک بورڈ صرف نوٹس جاری کرنے تک محدود ہے۔ تفصیل کے مطابق متروکہ وقف املاک بورڈ، ملتان ریجن میں موجود 123 کنال سے زائد اراضی کا قبضہ حاصل کرنے میں ناکام ہو چکا ہے۔ محکمانہ اندازے کے مطابق زیر قبضہ اراضی کی گزشتہ 56 سال کی آمدنی 3 کروڑ 36 لاکھ روپے بنتی ہے۔ سرکاری ریکارڈ کے مطابق ملتان ریجن کی 123 کنال 13 مرلہ متروکہ کمرشل و زرعی اراضی قابض مافیا کے نرغے میں ہے۔ جن میں سے 4 کنال ضلع ملتان، 10 کنال 17 مرلہ ضلع لودھراں، 24 کنال 10 مرلہ ضلع خانیوال جبکہ 83 کنال6 مرلہ ضلع وہاڑی میں موجود ہے۔ متروکہ وقف املاک بورڈ کے مطابق اراضی پر 1960ء سے قبضے چلے آ رہے ہیں، اراضی کا مکمل ریکارڈ چیئرمین متروکہ وقف املاک بورڈ اور چیف سیکرٹری پنجاب سمیت دیگر اعلیٰ حکام کے پاس بھی موجود ہے مگر آج تک کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی گئی۔ متروکہ وقف املاک بورڈ کے مقامی افسران کا کہنا ہے کہ مذکورہ اراضی کا قبضہ واگزار کرانا چاہتے ہیں مگر پولیس اور ضلعی انتظامیہ تعاون نہیں کر رہی۔ واضح رہے کہ ملتان شہر میں سورج کند روڈ اور نواب پور روڈ پر بورڈ کی درجنوں مرلہ اراضی بھی قابض مافیا کے نرغے میں ہے۔ بورڈ کی جانب سے کئی بار متروکہ اراضی پر ناجائز قابضین کے خلاف کاروائی کرنے کا فیصلہ کیا گیا مگر سوائے نوٹس جاری کرنے کے کوئی عملی کاروائی نہ کی جا سکی۔ دوسری جانب متروکہ وقف املاک بورڈ کے مطابق یہ اراضی واگزار کرانے سے محکمانہ ا?مدنی میں کروڑوں روپے کا اضافہ ہو گا۔

متروکہ وقف املاک

مزید : ملتان صفحہ آخر