لے کے خود پیر مغاں ہاتھ میں مینا آیا | شاد عظیم آبادی |

لے کے خود پیر مغاں ہاتھ میں مینا آیا | شاد عظیم آبادی |
لے کے خود پیر مغاں ہاتھ میں مینا آیا | شاد عظیم آبادی |

  

لے کے خود پیر مغاں ہاتھ میں مینا آیا 

مے کشو شرم کہ اس پر بھی نہ پینا آیا  

دل نے دیکھا مجھے اور میں نے فلک کو دیکھا 

بچ کے ساحل پہ اگر کوئی سفینا آیا 

کسی بدمست کی یاد آ گئیں آنکھیں ساقی 

جب چھلکتا ہوا آگے مرے مینا آیا 

اک ذرا سی تھی کبھی کی خلش اس پر اے حشر 

دل میں لیتا ہوا زاہد وہی کینہ آیا 

چاہا جو کچھ وہ زمانے نے کیا نقش اس پر 

میں تو سادہ لیے اس دل کا نگینہ آیا 

آج تک دامن گل چاک ہے خیاط ازل 

تجھ کو خلعت بھی حسینوں کا نہ سینا آیا 

ڈھال کر دیتے ہیں کس کو کسے بے ڈھالے ہوئے 

میرے ساقی کو تو یہ بھی نہ قرینا آیا 

زندگی کرتے ہیں کس طرح یہ سیکھو اس وقت 

شادؔ کیا نفع اگر مرنے پہ جینا آیا 

شاعر: شاد عظیم آبادی

(مجموعۂ کلام: شاد عظٰم آبادی؛مرتبہ،قیصر خالد،سالِ اشاعت،2005 )

Lay   K   Kud   Peer -e-Mughaan    Haat     Men    Meena   Aaaya

May   Kasho   ,   Sharm   Keh   Uss   Par   Bhi    Na   Peena   Aaya

Dil   Nay    Dekha    Mujhay    Aor   Main   Nay   Falak   Ko   Dekha

Bach   K   Saahil    Pe    Agar   Koi    Safeena    Aaya 

Kisi   Bad   Mast   Ki    Yaa   Aa    Gaen    Aankhen   Saaqi

Jab    Chhalakta   Hua    Aagay   Miray    Meena   Aaya

Ik   Zara   Si   Thi   Kabhi   Ki    Khalish   Uss   Par   Ay   Hashr 

Dil   Men    Leta   Hua   Zahid    Wahi   Keena   Aaaya

Chaaha   Jo   kuch   Wo   Zamaanay   Nay    Kiya   Naqsh   Iss   Par

Main   To   Saada   Liay   Iss   Dil    Ka   Nageena   Aaya

Aaj   Tak    Daaman -e-Gul   Chaak   Hay   Khayaat-e-Azal

Tujh   Ko    Khilat   Bhi   Haseenon   Ka   Na    Seena    Aaya

Dhaal   Kar   Detay   Hen  Kiss   Ko    Kisay   Be   Dhaalay   Huay

Meray   Saaqi   Ko   To   Yeh   Bhi   Na   Qareena   Aaya

Zindagi   Kartay   Hen   Kiss   Tarah   Yeh   Seekho  Uss   Waqt

SHAD   Kaya   Nafaa   Agar   Marnay   Pe    Jeena    Aaaya

Poet: Shad   Azimabadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -