سروس ٹربیونل کا فیصلہ بحال کمشنر نے پٹواری امداد کو کاہنہ تعینات کردیا

سروس ٹربیونل کا فیصلہ بحال کمشنر نے پٹواری امداد کو کاہنہ تعینات کردیا

  



لاہور(اپنے نمائندے سے) کمشنر لاہور نے موضع کاہنہ پٹواری کی تعیناتی کے حوالے سے سروس ٹربیونل کے فیصلے کو بحال کرتے ہوئے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ کلکٹر کے فیصلے کو غیر قانونی قراردیا روز نامہ پاکستان کی طرف سے کی گئی نشاندہی کے بعد کمشنر لاہور جواد رفیق نے پٹواری امداد حسین کی بحالی اور زبردستی بیٹھے ہوئے پٹواری کاہنہ ذوالفقار علی کو فارغ کرنے کے بارے میں سروس ٹربیونل کا فیصلہ بحال کردیا جس پر گزشتہ روز کے بعد پٹواری ذوالفقار علی نے چارج دینے کی بجائے مسلح افراد بلالئے جو پٹواری خانے کے محافظ بن کر چاروں طرف پھیل گئے۔ موضع کاہنہ میںتعینات کئے جانے والے پٹواری کی سرپرستی کرنے اور سروس ٹربیونل کے فیصلے پر عمل درآمد نہ کرنے کے باعث ایڈیشنل کلیکٹر لاہور سمیت محکمہ مال کے اعلیٰ افسران بھی بدنام ہورہے تھے جس پر گزشتہ روز کمشنر لاہور رفیق ملک نے اس ضمن میں اپنے فیصلے میں مزید تحریر کیا ہے کہ اگر ایڈیشنل ڈسٹرکٹ کلکٹر کو اس پٹواری کی وجہ سے کوئی مسئلہ ہے تو وہ سروس ٹربیونل میں اپیل دائرکریں دوسری جانب کمشنر لاہور کافیصلہ سننے کے بعد غیر قانونی طور پر ریکارڈ پر قابض پٹواری ذوالفقار علی اور حسین کو سنگین نتائج کی دھمکیاں دیتے ہوئے پٹوار خانہ کا ہنہ کا چارج واپس دینے کی بھی شرائط سامنے رکھ دیں۔ پٹوری ذوالفقار علی نے کمشنر لاہور کی جانب سے سروس ٹربیونل کے فیصلے کوبحال کرنے کے باوجود کمشنرر لاہور کے احکامات پر عمل درآمد کرنے سے صاف انکار کردیا اپنی مرضی سے موضع کاہنہ کا پٹواری سرکل چارج واپس کروں گا پٹواری ذوالفقار علی نے کمشنر لاہور کے فیصلے کے خلاف بغاوت کا اعلان کردیا ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...