کراچی ، جے یو آئی سندھ کے ناظم مفتی حماد اللہ پر قاتلانہ حملہ ، بال بال بچ گئے

کراچی ، جے یو آئی سندھ کے ناظم مفتی حماد اللہ پر قاتلانہ حملہ ، بال بال بچ گئے

  



  کراچی (آن لائن) کراچی کے علاقے گلشن اقبال تیرہ سی میں واقع مدرسہ جامع شفیق الاسلام کے باہر جمعیت علمائے اسلام مولانا سمیع الحق گروپ کے صوبائی ناظم مفتی حماد اللہ مدنی کے قافلے پر نامعلوم مسلح افراد نے حملہ کر دیا جس میں وہ اور قافلے میں شامل چھ افراد محفوظ رہے۔ ۔، پولیس حکا م کے مطا بق جمعیت علمائے اسلام سندھ کے ناظم مفتی حماد اللہ مدنی اپنے گھر جارہے تھے کہ راستے میں ان کی گاڑیوں میں سے ایک پر نامعلوم مسلح ملزمان نے فائرنگ کردی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ فائرنگ ہائی روف پر کی گئی جبکہ مفتی حماد اللہ مدنی دوسری گاڑی میں موجود تھے، واقعے میں کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔ادھرمدرسہ انتظامیہ کے مطابق ایک درجن سے زائد مسلح ملزمان پیدل تھے جنہوں نے دو گاڑیوں کے ساتھ مدرسے پر بھی فائرنگ کی۔ واقعے کے بعد پولیس موقع پر پہنچ گئی اور مدرسے کے باہر ایک پولیس موبائل مستقل طورپر تعینات کردی، دوسری جانب خالد بن ولید روڈ پر واقع بنگلے کے باہر بارات سے واپسی پر باراتیوں نے ہوائی فائرنگ کی۔ علاقہ مکینوں کی شکایت پر فیروز آباد پولیس نے موقع پر کاروائی کرتے ہوئے نو باراتیوں کو گرفتار کیا اور ان کے قبضے سے آٹھ کلاشنکوف، ایک جی تھری اور رپیٹر برآمد کرنے کے بعد مقدمہ بھی درج کرلیا۔ گرفتار ملزمان کاکہنا ہے کہ وہ سکیورٹی گارڈ ہیں اور صاحب کے کہنے پر خوشی میں فائرنگ کی علا وہ ازیں میٹھا در کے علاقے میں پولیس مقابلے میں اینٹی کار لفٹنگ سیل شریف آباد کا اڑتیس سالہ برطرف اہلکار شفیق شدید زخمی ہونے کے بعد اسپتال میں دم توڑ گیا۔ پولیس کے مطابق بہادرآباد کے علاقے میں چھینی گئی گاڑی کے تعاقب کے بعد میٹھا در کے علاقے میں پولیس مقابلہ ہوا تاہم ملزمان فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ رضویہ کے علاقے لیاقت چوک کے قریب نامعلوم مسلح افراد کی فائرنگ سے ایک شخص زخمی ہوگیا۔

مزید : صفحہ آخر