اقتدار میں آتے ہی صدر،وزیراعظم اورگورنر ہاوسز پر بلڈوزر چلادیں گے:عمران خان

اقتدار میں آتے ہی صدر،وزیراعظم اورگورنر ہاوسز پر بلڈوزر چلادیں گے:عمران خان
اقتدار میں آتے ہی صدر،وزیراعظم اورگورنر ہاوسز پر بلڈوزر چلادیں گے:عمران خان

  



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ اقتدار میں آتے ہی ایوان صدر، ایوان وزیراعظم اور تمام گورنر ہاﺅس بلڈوزرچلا کر مسمار کر دیں گے اور وہاں بادشاہوں کے زیر استعمال بڑے بڑے خطے بچوں کے کھیلنے کی گراﺅنڈیں بنا دیں گے۔ جیو نیوز کے پروگرام کیپٹل ٹاک میں گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ سونامی کو کوئی نہیں روک سکتا۔ ہم بڑے ایوان نہیں چاہتے، ان ایوانوں کو عوامی استعمال میں لائیں گے۔ اسلام آباد میں اپنے گھر کی قیمت کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ جس وقت یہ زمین خریدی گئی تھی اس وقت کی قیمت عوام کے سامنے پیش کر دی، وہ آج کی قیمت کے بارے سوال گول کر گئے۔ ان کا کہنا تھا کہ شوکت خانم ہسپتال کو جس طرح مثالی ادارے کے طور پر چلایا گیا ہے اسی طرح ملک کے دیگر ادارے بھی چلائے جا سکتے ہیں۔ ہم صرف 17 وزیر بنائیں گے اور ریلوے جیسے ادارے وزیروں کے بجائے پیشہ وارانہ مہارت رکھنے والوں کے ذریعے ہی چلائیں گے۔ جہاں تک ملک کو شوکت خانم ہسپتال سمجھنے کا سوال ہے تو جس طرح یہ ادارہ ہے ملک کے باقی ادارے بھی اسی طرز پر چلائے جا سکتے ہیں۔ اصل مسئلہ کرپشن اور صوابدیدی اختیارات کا ہے، ہم اقتدار میں آنے کے دو دن کے اندر بڑی کرپشن ختم کر دیں گے جبکہ ارکان اسمبلی کو صوابدیدی اور ترقیاتی فنڈز جاری نہیں کریں گے کیونکہ ترقی فنڈز ارکان اسمبلی نہیں بلدیاتی اداروں کو جائیں۔ شمالی وزیرستان جانے سے متعلق سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وہ ڈیرہ اسماعیل کے راستے شمالی وزیرستان جائیں گے اور اپنے ساتھ مغربی میڈیا کے لوگوں کو بھی لے کر جائیں گے، اینکر پرسن کے سوال کہ کیا مغربی میڈیا پر طالبان کی طرف سے حملہ نہیں ہوگا تو انہوں نے کہاکہ نہیں کوئی حملہ نہیں ہو گا کیونکہ وہاں کے تمام لوگ امن چاہتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ شمالی وزیرستان میں تقریباً ساڑھے تین لاکھ کی آبادی ہے، اس ساڑھے تین لاکھ آبادی سے تو کوئی پوچھے کہ کیا ہونا چاہئے۔ اینکر پرسن نے سوال کیا کہ دہشت گردی میں اوردھماکوں میں الیکشن کیسے ہوں گے تو عمران کا خان کا کہنا تھا کہ 2008ءکے الیکشن کے وقت بھی یہی حالات تھے، حالات تو ایسے ہی رہیں گے تو کیا ا لیکشن نہیں ہو گے۔ ان کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف ایک نظریے کے تحت سیاست کر رہی ہے اور جو ہمارے نظریے پر پارٹی میں آئے گا وہی ہمارے ساتھ چلے گا۔ انہوں نے کہا کہ کچھ لوگ پارٹی جوائن کرنے سے متعلق مطالبہ کرتے ہیں کہ ان سے ٹکٹ کا وعدہ کیا جائے جو نہیں کیا جا سکتا کیونکہ منتخب باڈیز کی سفارشات پر ہی ٹکٹ دیئے جائیں گے۔ایک سوال پر تو عمران خان نے کہا کہ اقتدار میں آ کر ہم وہ کام کریں گے جو پاکستان میں کسی نے اس سے پہلے نہیں کئے ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ غریب ٹیکس دیتے ہیں اور امیر نہیں امیر لوگوں سے ٹیکس لے کرغریب عوام کو منتقل کریں گے اور تمام خرچے کم کر کے تعلیم پر پانچ گنا زیادہ جبکہ صحت پرچھ گنا زیادہ خرچ کریں گے۔ پاکستان آج جس مقام پر کھڑا ہے اگر خرچے کم کر کے آمدنی نہ بڑھائی گئی تو ہر پاکستانی پر قرضہ ڈیڑھ لاکھ تک پہنچ جائے پاکستان میں کبھی کسی نے خرچے کم نہیں کئے، شاہانہ رہن سہن ختم نہیں کیا، تحریک انصاف اقتدار میں آ کر ان تمام روایات کو بدل دے گی۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف پہلی پارٹی ہے جو دیہی علاقوں تک ڈویلپمنٹ کا پلان رکھتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کوئی سیاستدان سول سروسز میں اثر انداز نہیں ہو سکے گا، ایم این اےز کے ڈویلپمنٹ فنڈز بند کر دیں گے اور بلدیاتی اداروں کو فنڈز دیئے جائیں گے۔ عمران خان نے کہا کہ اگر آپ نے پاکستان کو بچانا ہے اور نیا پاکستان بنانا ہے تو ان تمام روایات کو بدلنا ہو گا۔کرپشن ختم کرنے کے طریق کار سے متعلق سوال پر عمران خان نے کہا کہ جتنی پاور سنٹرلائز ہو گی کرپشن بھی اتنی ہی زیادہ ہو گی، جب تک نیب گورنمنٹ کے نیچے رہے گی، کرپشن ہوتی رہے گی۔ تمام کرپشن تو گورنمنٹ ہی کرتی ہے اور کرپشن کیلئے بنائے گئے تحقیقاتی ادارے کو بھی اسی گورنمنٹ کے ماتحت رکھا گیا ہے لہٰذا جب تک نیب کو علیحدہ نہیں کیا جائے گا کرپشن ہوتی رہے گی۔ان کا کہنا تھا کہ اگر اس ملک میں ٹیکس اکٹھا کرنا ہے تو پہلے لوگوں کو یقین دلائیں کہ ان کے پیسے سیاستدان اپنے اوپر خرچ نہیں کریں گے۔ عمران خان نے دعویٰ کیا کہ وہ نو دنوں میں بڑی کرپشن ختم کر سکتے ہیں۔ اس سوال پر نگران سیٹ اپ کہاں سے آئے گا اور نگران کون ہو گا؟تو عمران خان نے کہا کہ ہم سے ابھی تک نگران سیٹ اپ کے بارے میں بات نہیں کی گئی تاہم اگر ان سے پوچھا گیا تو بہت سے ایسے نام ہیں جو نگران سیٹ اپ کیلئے دیئے جا سکتے ہیں۔ عمران خان کا کہنا تھا کوئی کچھ بھی کر لے سونامی نہیں روک سکتا۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ سب کو تحریک انصاف کے نظریے پر پارٹی میں خوش آمدید کہتے ہیں اور تحریک انصاف کا نظریہ نیا پاکستان ہے۔

مزید : قومی


loading...