سیکرٹری زراعت پنجاب کا ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ کا دورہ

سیکرٹری زراعت پنجاب کا ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ کا دورہ

  

لاہور(کامرس رپورٹر)زرعی سائنسدانوں کو زرعی ترقی کے لیے تما م وسائل بروئے کارلانے چاہیے اورزرعی پالیسی سازی میں حکومت کی معاونت کرنی چاہیے۔ یہ بات علی طاہر سیکرٹری زراعت پنجاب نے ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد کے زرعی سائنسدانوں سے خطا ب کرتے ہوئے کہی ۔ انہوں نے زرعی سائنسدانوں پر زور دیا کہ وہ روائتی فصلوں کے ساتھ ساتھ غیر روائتی فصلوں کا رقبہ کاشت بڑھانے کے لیے نئی بریڈنگ حکمت عملی کو اپنائیں اور مخلوط کاشت کے لیے فصلوں کا تعین کریں۔اس طرح غیر روائتی فصلوں (دالیں، تیلدار اجناس وغیرہ)کی پیداوار بڑھانے سے ہماری درآمدات میں کمی واقع ہوگی۔ انہوں نے کہاکہ زرعی شعبہ کی ترقی کے لیے زرعی سائنسدانوں ،حکومتی اداروں اور نجی شعبہ کو مشترکہ لائحہ عمل تیار کرنا چاہیے۔ریسرچ اداروں میں جو کام ہورہا ہے اسے کاشتکاروں تک پہچانا بھی اشد ضروری ہے تاکہ کاشتکار اپنی پیداوار بڑھا سکیں۔سیکرٹری زراعت پنجاب نے ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ میں ڈسپلے سنٹر کا بھی معائنہ کیا اور تمام شعبوں کے سربراھان سے بریفنگ لی۔ سیکرٹری زراعت پنجاب کو ادارے میں تیار کی جانے والی گندم، گنے ،کپاس ، دھان ، سبزیوں اور پھلوں کی نئی اقسام کے بارے میں آگاہ کیاگیا۔ ڈاکٹر عابد محمو د ڈائریکٹر جنرل زراعت ریسرچ ، ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد نے سیکرٹری زراعت پنجاب کو ادارے کی تحقیقاتی ترجیحات اور کارکردگی کے بارے میں آگاہ کیااورہر فصل کے مستقبل کے لائحہ عمل کے بارے میں بھی بتایا۔ انہوں نے موسمی تغیرات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ درجہ حرارت بڑھ رہا ہے جس کا مقابلہ کرنے کے لیے گندم اور کپاس کی ایسی اقسام تیار کی جارہی ہیں جو زیادہ گرمی کو برداشت کرسکیں اور کم پانی کے ساتھ زیادہ پیداوار دے سکیں۔

انہوں نے بتایا کہ ادارہ کے سائنسدان فصلوں کی کاشت بلحاظ علاقہ جات پر تحقیق کررہے ہیں ۔ انہوں نے مزید بتایا کہ ادارہ بین الاقوامی اداروںکے تعاون سے تحقیق کو جدید بنانے اور نئی اقسام کی تیاری میں مدد حاصل کررہاہے ۔ ان تمام کوششوں سے پاکستان میں زرعی پیداوار بڑھانے میں مد د ملے گی۔بعد ازاںسیکرٹری زراعت پنجاب نے ایوب زرعی تحقیقاتی ادارہ فیصل آباد میں مختلف شعبہ جات کی لیبارٹریوں کا دورہ بھی کیا اور تحقیقی سرگرمیوں سے آگاہی حاصل کی۔

مزید :

کامرس -