مغرب کیلئے جمہوریت سیاسی نظا م نہیں تہذیبی منصوبہ ہے،میاں مقصود

مغرب کیلئے جمہوریت سیاسی نظا م نہیں تہذیبی منصوبہ ہے،میاں مقصود

  

لاہور (پ ر)امیر جماعت اسلامی لاہور میاں مقصود احمد نے کہا ہے کہ مغربی دنیا جمہوریت کو ایک آفاقی نظام سمجھتی ہے لیکن مغربی دنیا میں جمہوریت سیکولرازم اور لبر ل ازم کے ساتھ منسلک ہے یعنی جمہوریت کے ذریعے اگر لبرل اور سیکولر عناصر برسراقتدار آئیں تو جمہوریت زندہ باد اور اگر اس کے ذریعے لاطینی امریکہ میں بائیں بازو کے رہنما اور مسلم دنیا میں اسلامی تحریکیں اقتدار میں آئیں تو جمہوریت مردہ باد اس صورت میں اس کے سوا کیا کہاجاسکتا ہے کہ مغرب کیلئے جمہوریت ایک سیاسی نظام نہیں بلکہ ایک تہذیبی منصوبہ ہے اگرچہ جمہوریت ایک سیاسی نظام اور ایک تاریخی تجربہ ہے مگر اہل مغرب جمہوریت کا ذکر ایک عقیدہ کے طور پر بھی کرتے ہیں ان کے نزدیک جمہوریت مقد س ہے اور جمہوریت کا درجہ اخلاقی قدروں کے برابر بلکہ اس سے بھی زیادہ ہے۔ مغربی دنیا میں جمہوریت رکھنے والے ملک مہذب ہیں۔

اور غیر جمہوری ملک غیر مہذب، جمہوری ملک آزاد ہیں اورغیر جمہوری ملک ایک قسم کی غلامی میں مبتلا ہیں ایسا نہیں ہے کہ جمہوریت خرابیوں سے دوچار نظر نہیں آتی لیکن اہل مغرب کو جب کہیں جمہوریت خرابیوں سے دوچار نظر آتی ہے تو وہ سمجھتے ہیں کہ جمہوریت کے مسئلے کا حل مزید جمہوریت ہے جبکہ ہمارے ہاں جب کبھی جمہوریت کے سلسلہ میں کوئی مسئلہ درپیش ہوتا ہے تو ہم غیرجمہوری قوتوں کی طرف دیکھنا شروع کردیتے ہیں حالیہ سیاسی بحران اس کی منہ بولتی تصویر ہے اس میں کوئی شک نہیں کہ جمہوری ملکوں میں بدعنوانی ،کرپشن کے خلاف کامیاب مزاحمت ممکن ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -