داعش نے چار لوگوں کے ہوںٹ ایسی بات کہنے پر سی دیئے کہ جان کر آپ کو یقین آ جائے گا کہ ان لوگوں کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں

داعش نے چار لوگوں کے ہوںٹ ایسی بات کہنے پر سی دیئے کہ جان کر آپ کو یقین آ ...
داعش نے چار لوگوں کے ہوںٹ ایسی بات کہنے پر سی دیئے کہ جان کر آپ کو یقین آ جائے گا کہ ان لوگوں کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں

  



دمشق(مانیٹرنگ ڈیسک)شام و عراق میں برسرپیکار شدت پسند تنظیم داعش نے دھاتی تار سے4عراقی فوجیوں کے منہ سی دیئے ہیں۔ اس ظلم کی وجہ یہ ہے کہ یہ فوجی داعش کے خلاف عراق فوج کی فتوحات پر مبنی باتیں کر رہے تھے۔ ان فوجیوں کو داعش نے عراقی شہر موصل میں لڑائی کے دوران قیدی بنایا تھا۔نیوز ایجنسی سپوتنک انٹرنیشنل (Sputnik Intl)سے گفتگو کرتے ہوئے موصل کے ایک شہری نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ میں ان چاروں فوجیوں کے ساتھ کھڑا ان کے ساتھ باتیں کر رہا تھا۔ یہ چاروں لوگ اپنی فتوحات کے متعلق بتا رہے تھے۔ پھر اچانک ایک اور شخص وہاں آ گیا۔ اس نے بھی گفتگو میں حصہ لیا اور داعش کی ناکامیوں کے متعلق بات کرنے لگا۔ میرے وہاں سے جانے کے کچھ ہی دیر بعد یہ فوجی داعش کے شدت پسندوں کے ہتھے چڑھ گئے جنہوں نے ان کے لب سی دیئے۔ ممکنہ طور پر وہاں آنے والا شخص داعش کا کارکن تھا۔ شہری نے بتایا کہ شدت پسندوں نے ان کے لب سی کر انہیں ایک گاڑی میں کھڑا کر کے شہر کے اپنے زیرتسلط علاقوں کا چکر لگوایا تاکہ دیگر شہری عبرت حاصل کریں اور عراقی فوج کی فتوحات کے متعلق بات کرنے سے گریز کریں۔ شہری کا کہنا تھا کہ داعش نے ہر جگہ اپنے جاسوس چھوڑ رکھے ہیں جو لوگوں میں گھل مل جاتے ہیں اور پھر ان کی مخبری کردیتے ہیں۔ بعدازاں داعش کے شدت پسند آ کر ان لوگوں کو پکڑ کر لے جاتے ہیں اور اذیتیں دیتے ہیں۔جو شخص بھی دشمن کی تعریف کرتا ہوا پکڑا جائے اسے سرعام سزا دی جاتی ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس