سرکاری زمین غیرقانونی الاٹمنٹ کیس، قائم علی شاہ بے قصورقرار

  سرکاری زمین غیرقانونی الاٹمنٹ کیس، قائم علی شاہ بے قصورقرار

  

کراچی(سٹاف رپورٹر) نیب نے ملیر ندی کی سرکاری زمین کی غیر قانونی الاٹمنٹ سے متعلق کیس میں سابق وزیر اعلی سندھ سید قائم علی شاہ کو کلین چٹ دے د یتے ہوئے ان کی زرضمانت واپس کرنے کا حکم دے دیا،عدالت نے ریمارکس دیے نیب پہلے تحقیقات مکمل کرے اور بعد میں لوگوں کو گرفتار کرے۔ تفصیلات کے مطابق قائم علی شاہ کے خلاف ملیر ندی کی سرکاری زمین کی غیر قانونی الاٹمنٹ کے کیس کی سماعت دوران عدالت نے ریمارکس دیے نیب پہلے تحقیقات مکمل کرے اور بعد میں لوگوں کو گرفتار کرے۔تفصیلات کے مطابق سندھ ہائی کورٹ میں قائم علی شاہ کے خلاف ملیر ندی کی سرکاری زمین کی غیر قانونی الاٹمنٹ کے کیس کی سماعت ہوئی۔ سابق وزیراعلی سندھ عدالت کے سامنے پیش ہوئے۔عدالت میں سماعت کے دوران وکیل نیب نے بتایا کہ سابق وزیراعلی سندھ کے خلاف شواہد نہیں ملے، قائم علی شاہ کے خلاف غیرقانونی الاٹمنٹ کی انکوئری ختم کردی۔چیف جسٹس سندھ ہائی کورٹ نے ریمارکس دیے کہ دیگرالاٹیزکہاں ہیں، ان کے خلاف کیا کارروائی ہوئی؟ جس پر نیب وکیل نے جواب دیا کہ الاٹمنٹ منسوخ کردی گئی تھی اس لیے کسی کے خلاف کارروائی جاری نہیں۔سندھ ہائی کورٹ نے قائم علی شاہ کے خلاف انکوئری کی درخواست نمٹاتے ہوئے ریمارکس دیے کہ نیب پہلے تحقیقات مکمل کرے اور بعد میں لوگوں کو گرفتار کرے۔بعدازاں عدالت نے سابق وزیراعلی سندھ قائم علی شاہ کو زرضمانت واپس کرنے کا حکم دے دیا۔

قائم علی شاہ

مزید :

صفحہ اول -