جلوزئی ہاؤسنگ سکیم کی جلد تکمیل میں رکاوٹ برداشت نہیں: ڈاکٹر امجد علی 

جلوزئی ہاؤسنگ سکیم کی جلد تکمیل میں رکاوٹ برداشت نہیں: ڈاکٹر امجد علی 

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)خیبرپختونخوا کے وزیر ہاوسنگ ڈاکٹر امجد علی نے سول سیکرٹریٹ پشاور میں محکمہ ہاوسنگ کے ماہانہ جائزہ اجلاس کی صدرات کی۔ اجلاس میں محکمہ ہاوسنگ کے مختلف منصوبوں پر پیش رفت کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ جلوزئی ہاوسنگ سکیم پر تعمیراتی کام کا سلسلہ تیزی سے جاری ہے، اور منصوبہ دسمبر 2020 میں مکمل کرلیا جائیگا، اجلاس کو بتایا گیا کہ منصوبے کے تیسرے مرحلے میں تقریباً ڈھائی ہزار کنال مزید رقبہ شامل کیا جائیگا، وزیر ہاوسنگ نے منصوبے پر تعمیراتی کام پر اطیمنان کا اظہار کرتے ہوئے منصوبے کے لئے بجلی کی ترسیل کا کام تیز کرنے کی ہدایت کی۔ اجلاس میں سرکاری ملازمین کے لئے حیات آباد فیز فائیو میں تیار ہونے والے ہائی رائز فلیٹس پر تعمیراتی کام کا بھی جائزہ لیاگیا، وزیر ہاوسنگ ڈاکٹر امجد علی کا کہنا تھا کہ منصوبہ اپنی مقررہ مدت میں پورا کیا جائے اور اس ضمن میں کسی قسم کی تاخیر برداشت نہیں کی جائیگی۔ اجلاس میں سول کورٹرز فلیٹس کے لئے تین ہفتوں کے اندر تعمیراتی کام کا سنگ بنیاد رکھنے کی ڈیڈ لائن دی گئی۔ اجلاس میں جرمہ ہاوسنگ سکیم سے متعلق تمام تر مسائل جلد سے جلد حل کرنے پربھی اتفاق کیا گیا۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ سوڑیزئی میں نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم کے لئے کنسلٹنٹ کا انتخاب کرلیا گیا ہے، سکیم کے لئے باونڈری وال، مین گیٹ اور چیک پوسٹس کی تعمیر کے لئے پی ڈی ڈبلیو پی سے منظوری بھی لے لی گئی ہے۔ جائزہ اجلاس میں وزیر ہاوسنگ ڈاکٹر امجد علی نے حکام کو شمالی وزیرستان، خیبر، باجوڑ، ملاکنڈ اور سوات میں سٹیلائیٹ ٹاونز کے لئے اراضی کی نشاندہی اور فزیبیلیٹی کا کام مکمل کرنے کی ہدایت کی۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ سٹیلائیٹ ٹاونز کے لئے سوات، پشاور، کوہاٹ، بنوں، ایبٹ آباد، مردان، ڈی ائی خان، لکی مروت، ٹانک، مالاکنڈ، اور ضلع خیبر میں اراضی کی نشاندہی بھی کر لی گءِی ہے،  صوبائی وزیر کو دانگرام ہاوسنگ سکیم سوات اور میڈیا کالونی پر اب تک ہونے والی پیش رفت سے بھی آگاہ کیا گیا، ڈاکٹر امجد علی کا کہنا تھا کہ منصوبے پرکام کی رفتار کو مزید تیز کیا جائے۔ انہوں نے حکام کو نئی ہاوسنگ سکیمز پر مرحلہ وار کام کرنے کی ہدایت کی۔ اجلاس کو ریجنل سہولت مراکز کی کارکردگی کے حوالے سے بھی آگاہی دی گئی، اجلاس کو بتایا گیا کہ یہ مراکز الاٹمنٹ لیٹرز، فائل ورک، اور منصوبوں کی اگاہی کے حوالے سے اہم کردار ادا کررہے ہیں، جس سے ہاوسنگ سکیمز کے لئے درخواست گزاروں میں اضافہ ہورہا ہے۔ ڈاکٹر امجد علی کا کہنا تھا کہ حکومت نے تعمیراتی شعبے کو تاریخ میں پہلی مرتبہ ذیادہ مراعات فراہم کی ہیں، اور تعمیرات کے شعبے میں ٹیکسز کی شرح میں بھی کمی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ترقی یافتہ ممالک میں تعمیراتی شعبہ کو بہت اہمیت دی جاتی ہے۔ تعمیرات سے نہ صرف صوبے میں روزگار کے مواقع پیدا ہونگے بلکہ اس سے دیگر صنعتوں کو بھی فروغ حاصل ہوگا۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -