جو ریاست ایک شخص کو نہیں ڈھونڈ سکتی وہ اپنی ناکامی بھی تسلیم کرے: جسٹس اطہر من اللہ 

جو ریاست ایک شخص کو نہیں ڈھونڈ سکتی وہ اپنی ناکامی بھی تسلیم کرے: جسٹس اطہر من ...

  

  اسلام آباد(این این آئی)چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیئے ہیں کہ ریاستی ادارے اپنے کام میں ناکام ہو چکے ہیں۔ جسٹس اطہر من اللہ نے پانچ سال سے لاپتہ شہری عمران خان کی بازیابی کیلئے والدہ نسرین بیگم کی درخواست پر سماعت کی۔دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ لاپتہ افراد کی بازیابی کا کمیشن خود کہہ رہاہے کہ یہ جبری گمشدگی کا کیس ہے، عدالت کو تو کوئی سمجھ نہیں آتی کہ لاپتہ افراد کے کمیشن کا مقصد کیا ہے؟ کمیشن دس دس سال تک کیس رکھ کر بیٹھا رہتا ہے جس پر ڈپٹی اٹارنی جنرل سید محمد طیب شاہ نے کہا کہ یہ کمیشن کی حتمی رائے نہیں ہے۔چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ ہو سکتا ہے کہ وہ جرم کر کے خود غائب ہو مگر ریاست کہاں ہے؟ کوئی شخص اگر خود اپنی مرضی سے چلا گیا ہو تو بھی اس کا پتہ تو ریاست نے ہی کرنا ہے،عدالتوں کا کام انویسٹی گیشن کرنا نہیں، دنیا کی بہترین انٹیلی جنس ایجنسی بھی کہہ دے کہ انہیں نہیں معلوم تو پھر ہم کیا کہیں؟۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے عمران خان کی بازیابی کے لئے اداروں کو آخری مہلت دیتے ہوئے کہا کہ 29 ستمبر تک آخری مہلت ہے،شہری کو بازیاب نہ کرانے پر ناکامی تسلیم کرنا ہو گی، کوئی بندہ غائب ہو جائے اور اسے ڈھونڈا نہ جا سکے تو ریاست کو تسلیم کرنا چاہیے وہ فیل ریاست بن چکی، اگر ریاست اور کچھ نہیں کر سکتی تو کم از کم اتنا ظرف دکھائے کہ اپنی ناکامی تسلیم کر لے۔ کیس کی مزید سماعت 29 ستمبر کو ہوگی۔

جسٹس اطہر من اللہ 

مزید :

صفحہ آخر -