بے حس مورت

بے حس مورت
بے حس مورت

  

                                                                                                                                               بے حس مورت

ہمارے معاشرے کا المیہ ہے

ہم پہلے لوگوں کو

لفظوں سے گھائل کرتے ہیں

رفتہ رفتہ  ذبح کرتے ہیں

اور جب وہ بے حس ہو جائے

تعلق اور محبت کے  کھیل میں

پھر اس کو تراشتے ہیں

یہاں تک کہ وہ کچی مٹی

پتھر میں ڈھل جائے

اور پھر وہ ہی مٹی کا مجسمہ

پتھر کی  مورت ہے

نہ اس کی بات کوئی

نہ کوئی شکایت ہے

ہر چیز  اُس کےلیے بےمعنی ہے

 ہم اس کو مورت   کہتے  ہیں

بے حس مورت 

شاعرہ: حنا شہزادی

Be Hiss Moorat

Hamaaray Muaashray Ka almya Hay

Ham Pehlay Logon Ko

Lafzon Say Ghaayal Kartay Hen

Rafta Rafta Zibah Kartay Hen

Aor Jab Wo Be Hiss Ho Jaaey To

Taaluq Aor Muhabbat K Khail Men

Phir Uss Ko Taraashtay Hen

Yahaan Tak Keh Wo Kachhi Mati

Pathar Men Dhall Jaaey

Aor Phir Wo Hi Matti Ka Mujasma 

Pathar Ki Moorat Hay

Na Uss KI  Koi Baat

Na Koi Shikaayat Hay

har Cheez Uss K Liay Be Maani Hay

Ham Uss Uss Ko Moorat Kehtay Hen

Be Hiss Moorat

Poetess: Hin Shehzaadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -