عجب حالت ہماری ہو گئی ہے​

عجب حالت ہماری ہو گئی ہے​
عجب حالت ہماری ہو گئی ہے​

  

عجب حالت ہماری ہو گئی ہے​

یہ دنیا اب تمہاری ہو گئی ہے​

سخن میرا اداسی ہے سرِ شام​

جو خاموشی پہ طاری ہو گئی ہے​

بہت ہی خوش ہے دل اپنے کیے پر​

زمانے بھر میں خواری ہو گئی ہے​

وہ نازک لب ہے اب جانے ہی والا​

مری آواز بھاری ہو گئی ہے​

دل اب دنیا پہ لعنت کر کہ اس کی​

بہت خدمت گزاری ہو گئی ہے​

یقیں معزور ہے اب اور گماں بھی​

بڑی بے روزگاری ہو گئی ہے​

وہ اک بادِ شمالی رنگ جو تھی​

شمیم اس کی سواری ہو گئی ہے​

شاعر: جون ایلیا

Ajab Haalat Hamaai Ho Gai Hay

Yeh Dunya Ab Tumhaari Ho Gai Hay

Sukhan Mera Udaasi Hay Sar  e  Shaam

Jo Khaoshi Pe Taari Ho Gai Hay

Bahut Hi Khush Hay Dik Apnay Kiay Par

Zamaanay Bhar Men Khaari Ho Gai Hay

Wo Naazik Lab Hay Ab Jaanay Hi Waala

 Miri Awaaz Bhaari Ho Gai Hay

Dil!Ab Dunya Pe Laanat kar Keh Uss Ki

Bahut Khidmat Guzaari Ho Gai Hay

Yaqeen Mazoor Hay Ab Aor Gumaan Bhi 

Barri Be Rozgaari Ho Gai Hay

Wo Ik Baad  e  Shumaali Rang  Jo Thi

Shameem Uss Ki Sawaari Ho Gai Hay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -