کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

  

کبھی کبھی تو بہت یاد آنے لگتے ہو

کہ روٹھتے ہو کبھی اور منانے لگتے ہو

گِلہ تو یہ ہے، تم آتے نہیں کبھی لیکن

جب آتے بھی ہو تو فوراً ہی جانے لگتے ہو

تمہاری شاعری کیا ہے بھلا، بھلا کیا ہے؟

تم اپنے دل کی اُداسی کو گانے لگتے ہو

سرودِ آتشِ زریں، صحنِ خاموشی

وہ داغ ہے جسے ہر شب جلانے لگتے ہو

سنا ہے کہکشاؤں میں روز و شب ہی نہیں

تو پھر تم اپنی زباں کیوں جلانے لگتے ہو

یہ بات جون تمہاری مذاق ہے کہ نہیں

کہ جو بھی ہو، اسے تم آزمانے لگتے ہو

شاعر: جون ایلیا ​

Kabhi Kabhi To Bahut Yaad Aanay Lagtay Ho

Keh Roothtay Ho Kabhi Aor Manaanay Lagtay Ho

Gila To Yeh Hay Tum Aatay Nahen Kabhi Lekin

Jab Aatay Ho To Foran Hi Jaanay Lagtay Ho

Tumhaari Shaaeri Kia Hay Bhala, Bhala Kia Hay

Tum Apnay Dil Ki Udaasi Ko Gaanay Lagtay Ho

Sarood  e  Aatish  e  Azrren   e  Sehn  e  Gull

Wo Daagh Hay Jisay Har Shab Jalaanay Lagtay Ho

Sunaa Hay Kaahshaanon Men Roz  o  Shab Hi Nahen

To Phir Tum Apni Zubaan Kiun Jalaanay Lagtay Ho

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -