تم سے جانم عاشقی کی جائے گی

تم سے جانم عاشقی کی جائے گی
تم سے جانم عاشقی کی جائے گی

  

تم سے جانم عاشقی کی جائے گی

اور ہاں یکبارگی کی جائے گی

کر گئے ہیں کوچ اس کوچے کے لوگ

اب تو بس آوارگی کی جائے گی

تم سراپا حسن ہو، نیکی ہو تم

یعنی اب تم سے بدی کی جائے گی

یار اس دن کو کبھی آنا نہیں

پھول جس دن وہ کلی کی جائے گی

اس سے مل کر بے طرح روؤں گا میں

ایک طرفہ تر خوشی کی جائے گی

ہے رسائی اس تلک دل کا زیاں

اب تو یاراں نارسی کی جائے گی

آج ہم کو اس سے ملنا ہی نہیں

آج کی بات آج ہی کی جائے گی

ہے مجھے احساس کو کرنا ہلاک

یعنی اب تو بے حسی کی جائے گی

شاعر: جون ایلیا

Tum Say Jaanum Aashqi Ki Jaaey

Aor Haan Yakbaargi Ki Jaaey

kar gaey Kooch Uss Koochay K Log

Ab To Bass Aawaargi Ki Jaaey

Tum Saraapa Husn Ho , Naiki Ho Tum

yaani Ab Tum Say Badi Ki Jaaey

Yaar Uss Din Ko Kabhi Aana Nahen

Phool Jiss Din Wo Kali Ki Jaaey

Uss Say Mill Kar Be Tarah Roun Ga Main 

AIk Turfa Tar Khushi Ki Jaaey

Ray Rasaaee Uss Talak Dil Ka Ziaan

Ab To Yaaraan Naarsi Ki Jaaey

Aaj Ham Ko Uss Say Milna Hi Nahen

Aaj Ki Baat Aaj Hi Ki Jaaey

Hay Mujhay Ehsaas Ko Karna Halaak

Yaani Ab To Behisi Ki Jaaey

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -