کر لیا خود کو جو تنہا میں نے

کر لیا خود کو جو تنہا میں نے
کر لیا خود کو جو تنہا میں نے

  

کر لیا خود کو جو تنہا میں نے

یہ ہنر کِس کو دکھایا میں نے

وہ جو تھا اس کو مِلا کیا مجھ سے

اس کو تو خواب ہی سمجھا میں نے

دل جلانا کوئی حاصل تو نہ تھا

آخرِ کار کیا کیا میں نے

دیکھ کر اس کو ہوا مست ایسا

پھر کبھی اسکو نہ دیکھا میں نے

شوقِ منزل تھا بُلاتا مجھ کو

راستہ تک نہیں ڈھونڈا میں نے

اک پلک تجھ سے گزر کر ، تا عمر

خود ترا وقت گزارا میں نے

اب کھڑا سوچ رہا ہوں لوگو!

کیوں کیا تم کو اِکھٹا میں نے

شاعر: جون ایلیا

Kar Lia Khud Ko Jo Tanhaa Main nay

Yeh Hunar Kiss Ko Dikhaaya Main Nay

Wo Jo Tha Uss Ko Mila Kia Mujh Say

Uss Ko To Khaab Hi Samjha Main Nay

Dil Jalaana Koi Haasil To Na Tha

Aakhir  e  Kaar Kya Kia Main Nay

Dekh Uss Ko Hua Mast Aisa 

Phir Kabhi Uss Ko Na Dekha Main Nay

Shoq  e  Manzil Tha Bulaat Mujh Ko

Raasta Tak Nahen Dhoona Main Nay

Ik Palak Tuj h Say Guzar Kar , Taa Umr

Khud Tira Waqt Guzaara Main Nay

Ab Kharra Soch Raha Hun Logo

Kiun KIa Tum Ko Akattha Main Nay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -