نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا

نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا
نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا

  

نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا

کاغذی ہے پیرہن ہر پیکرِ تصویر کا

شوخیِ نیرنگ، صیدِ وحشتِ طاؤس ہے

دام، سبزے میں ہے پروازِ چمن تسخیر کا

لذّتِ ایجادِ ناز، افسونِ عرضِ ذوقِ قتل

نعل آتش میں ہے، تیغِ یار سے نخچیر کا

کاوِ کاوِ  سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ

صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا

جذبۂ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے

سینۂ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا

آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے

مدعا عنقا ہے اپنے عالمِ تقریر کا

بس کہ ہوں غالبؔ، اسیری میں بھی آتش زیِر پا

موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا

شاعر: مرزا غالب

Naqsh faryaadi Hay Kiss Ki Shokhi  e  Tehreer ka

kaaghzi Hay pairhan Har Paikar  e  Tasveer Ka

Kaav  e  Kaav  e  Shakhat Jaani Haay  Tanhaai Na Pooch

Subh Karna Shaam Ka Laana Hay Joo  e  Sheer Ka

Jazbaa  e  Be Ikhtiaar e  Shoq Dekha Chaahiay

Seena  e  Shamsheer Say Baahar Hay Dam Shamsheer Ka

Aagahi Daam  e  Shuneedan Jiss Qadar Chaahay Bichaaey

Maduaa Anqaa Hay Apnay Aalam  e  Tareer Ka

Bas Keh Hun GHALIB Aseeri Men Bhi Aatish  e  Zer  e  Paa

Moo e  Aatish Deeda Hay Halqa Miri Zangeer Ka

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -