دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا

دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا
دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا

  

دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا

"عشقِ نبرد پیشہ" طلبگارِ مرد تھا

تھا زندگی میں مرگ کا کھٹکا لگا ہوا

اڑنے سے پیشتر بھی، مرا رنگ زرد تھا

تالیفِ نسخہ ہائے وفا کر رہا تھا میں

مجموعۂ خیال ابھی فرد فرد تھا

دل تا جگر، کہ ساحلِ دریائے خوں ہے اب

اس رہ گزر میں جلوۂ گل، آگے گرد تھا

جاتی ہے کوئی کشمکش اندوہِ عشق کی 

دل بھی اگر گیا، تو وُہی دل کا درد تھا

احباب چارہ سازیِ وحشت نہ کر سکے

زنداں میں بھی  خیال بیاباں نورد تھا

یہ نعشِ بے کفن، اسدِ خستہ جاں کی ہے

حق مغفرت کرے عجب آزاد مرد تھا

شاعر: مرزا غالب

Dhamki Men Mar Gia Jo Na Baab  e  Nabard Tha

Eshq Nabard Pesha , Talab Gaar Mard Tha

Tha Zindagi Men Marg Ka Khtaka Laga Hua

Urrnay Say Paishtar  Bhi Mira rang Zard Tha

Taleef  e  Nuskha  e  Wafa Kar raha Tha Main

Majmua  e  Khayaal Abhi Fard Fard Tha

Dil Ta Jigar Keh Saahil Daryaa  e  Khoon hay Ab

Iss Reh Guzar Men jalwa  e  Gull Aagay Gard Tha

Jaati Hay Koi Kashmakash Andoh  e  Eshq  Ki

Dil Bhi Agar Gia To Wahi Dil Ka Dard Tha

Ahbaab Chaara Saazi  e  Wehshat Na Kar Sakay

Zindaan Men Bhi Khayaal , Bayabaan Nikla

Yeh Naash  e  Be Kafan ASAD  e  Khasta Jaan Ki Hay

Haq Maghfarat Karay Ajab Azaad Mard Tha

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -