دہر میں نقشِ وفا وجہِ تسلی نہ ہوا

دہر میں نقشِ وفا وجہِ تسلی نہ ہوا
دہر میں نقشِ وفا وجہِ تسلی نہ ہوا

  

دہر میں نقشِ وفا وجہِ تسلی نہ ہوا

ہے یہ وہ لفظ کہ شرمندہٴ معنی نہ ہوا

سبزہٴ خط سے ترا کاکلِ سرکش نہ دبا

یہ زمّرد بھی حریفِ دمِ افعی نہ ہوا

میں نے چاہا تھا کہ اندوہِ وفا سے چھوٹوں

وہ ستمگر مرے مرنے پہ بھی راضی نہ ہوا

دل گزر گاہِ خیالِ مے و ساغر ہی سہی

گر نفس جادہٴ سر منزلِ تقویٰ نہ ہوا

ہوں ترے وعدہ نہ کرنے میں بھی راضی کہ کبھی

گوش منت کشِ گلبانگِ تسلی نہ ہوا

کس سے محرومیِ قسمت کی شکایت کیجے

ہم نے چاہا تھا کہ مر جائیں، سو وہ بھی نہ ہوا

مرگیا صدمہٴ یک جنبشِ لب سے غالب

ناتوانی سے حریفِ دمِ عیسیٰ نہ ہوا

شاعر:  مرزا غالب

Dehr Men naqsh  e  Wafa , Wajh  e  Tasalli Na Hua

Hay Yeh Wo Lafz Keh Sharminda  e  Maani Na Hua

Sabza  e  Khat Say Tira Kaakul  e  Sarkash  Na Daba

Yeh Zamurud Bhi hareef  e  Dam  e  Afee Na Hua

Main Nay Chaaha Tha Keh Andoh  e   Wafa Say Chootun

Wo Sitam Gar Miray Marnay Pe Bhi Raazi Na Hua

Dil Guzar Gaah  e  khayaal  e  may  o  Sagar Hi Sahi

Gar Nafas Jadaa  o  Sar  e  MAnzill  e  Taqwa  Na Hua

Hun Tiray waaday Na Karnay Men Bhi raazi Keh kabhi 

Gosh Minnat Kash  e  Gulbaang  e  Tasalli Na Hua

Kiss Say Mehroomi  e  Qismat Ki Shikaayat Kijiay

HamNay Chaaha Tha mar AJaaen , So Wo Bhi Na Hua

Mar Gia yak Junbash  e  Lab Sat GHALIB

Natawaani Say Hareef  e Dam  e  EESA Na Hua

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -