ستائش گر ہے زاہد اس قدر جس باغ رضواں کا

ستائش گر ہے زاہد اس قدر جس باغ رضواں کا
ستائش گر ہے زاہد اس قدر جس باغ رضواں کا

  

ستائش گر ہے زاہد اس قدر جس باغ رضواں کا

وہ اک گلدستہ ہے ہم بے خودوں کے طاق نسیاں کا

بیاں کیا کیجیے بیداد کاوش ہائے مژگاں کا

کہ ہر یک قطرۂ خوں دانہ ہے تسبیح مرجاں کا

نہ آئی سطوتِ قاتل بھی مانع میرے نالوں کو

لیا دانتوں میں جو تنکا ہوا ریشہ نیستاں کا

دکھاؤں گا تماشا دی اگر فرصت زمانے نے

مرا ہر داغِ دل اک تخم ہے سروِ  چراغاں کا

کیا آئینہ خانے کا وہ نقشہ تیرے جلوے نے

کرے جو پرتو ِخورشید عالم شبنمستاں کا

مری تعمیر میں مضمر ہے اک صورت خرابی کی

ہیولیٰ برق خرمن کا ہے خونِ گرم دہقاں کا

اُگا ہے گھر میں ہر سو سبزہ ویرانی تماشا کر

مدار اب کھودنے پر گھاس کے ہے میرے درباں کا

خموشی میں نہاں خوں گشتہ لاکھوں آرزوئیں ہیں

چراغِ مردہ ہوں میں بے زباں گور غریباں کا

ہنوز اک پرتوِ نقش خیالِ یار باقی ہے

دل افسردہ گویا حجرہ ہے یوسف کے زنداں کا

بغل میں غیر کی آج آپ سوتے ہیں کہیں ورنہ

سبب کیا خواب میں آ کر تبسم ہائے پنہاں کا

نہیں معلوم کس کس کا لہو پانی ہوا ہوگا

قیامت ہے سرشک آلودہ ہونا تیری مژگاں کا

نظر میں ہے ہماری جادۂ راہِ فنا غالبؔ

کہ یہ شیرازہ ہے عالم کے اجزائے پریشاں کا

شاعر: مرزاغالب

Sataaish gar Hay  Zahid Iss Qdar Jiss Baagh  e  Rizwaan Ka

WoIk Guldasta Hay , Ham be Khudon K Taaq   e  Nasyaan Ka

Bayan Ki a Kijiay Bedaad  Kavish  Haaaey Mzgaan Ka

Keh Ik Qatra  e  Khoon  Daana Hay Tasbeh  e  Marjaan Ka

Na Aaaee Satwat  e  Qaatil Bhi Maaney Meray Naalon Ko

Lia Daanton Men Jo Tinka , Hua Resha Neestaan Ka

Dikhaaun Ga Tamaasha Di Agar Fursat Zamaanay Nay

Mira Har Daagh  e  Dil Ik Tukhm Hay Sarw  e  Charaghaan Ka

Kia Aaaina Khaanay Ka Wo Naqasha Tiray Jalway Nay

karay Jo Partav  e  Khursheed , AakamShabnamistaan ka

Miri Tameer Men Muzmir HayIk Soorat Kharaabi Ki

Hualaa Barq  e    Khirman ka HayKhoon  e  Garm Dehkaan Ka

Uga Hay Ghar Men Har Su Sabza Veeraani Tamaasha   Kar

madaar Ab khodnay Par Khaas K Hay Meray DarbaanKa 

Kahmoshi Men Nihaan , Khoon gaashta Laakhon Aarzuen Hen

Charaagh  e  Murda Hun , Main Be Zubaan Gor  e  Ghareebaan Ka

Hunoor Ik  Partav  e  Naqsh  e  khayaal   e  Yaar Baaqi Hay

Dil  e  Afsurda , Goya, Hujra Hay YOUSAF  K Zindaan Ka

Baghl Men Ghair Ki Aaj Aap Sotay Hen Kahen , Warna

Sabab Kia Khaab Men Aa Kar Tabassum Haaa  e  Pinhaan Ka

Nahen Maloom kiss Kiss Ka Lahu Paani Hua Ho Ga

Qayaamat Hay , Sar kash Aalood Hona Teri Mizgaan Ga

Nazr Men hay Hamaari jaado  e  Raah  e  FFava GHALIB

Keh Yeh Sheeraaza Hay Aalam K Ajzaa  e  pareshaan Ka

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -