نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا 

نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا 
نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا 

  

نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا 

تھا سپندِ بزمِ وصلِ غیر ، گو بیتاب تھا 

مَقدمِ سیلاب سے دل کیا نشاط آہنگ ہے ! 

خانۂ عاشق مگر سازِ صدائے آب تھا 

نازشِ ایّامِ خاکستر نشینی ، کیا کہوں 

پہلوِ اندیشہ ، وقفِ بسترِ سنجاب تھا 

کچھ نہ کی اپنے جُنونِ نارسا نے ، ورنہ یاں 

ذرّہ ذرّہ رو کشِ خُرشیدِ عالم تاب تھا 

آج کیوں پروا نہیں اپنے اسیروں کی تجھے ؟ 

کل تلک تیرا بھی دل مہر و وفا کا باب تھا 

یاد کر وہ دن کہ ہر یک حلقہ تیرے دام کا 

انتظارِ صید میں اِک دیدہِ بے خواب تھا 

میں نے روکا رات غالبؔ کو ، وگرنہ دیکھتے 

اُس کے سیلِ گریہ میں ، گردُوں کفِ سیلاب تھا 

شاعر: مرزا غالب

Naal  e  Dil Men Shab Andaaz  e  Asar Nayaab Tha

Tha Sapnidam  e  bazm  e  Wasl   e  Ghair , Go Betaab Tha

Muqadam  e  Selaab Say Dil Kia Nishaat  Aahang Hay

Khaana  e  Aashiq , Magar Saaz  e  Sad Ay Aaab Tha

Naazish  e  Ayyaam Khaakistar nasheeni   e  Kia Kahun

Pehlu  e  Dil Andeshaa Waqf  e  Bistar Sinjaab Tha

Kuch Na Ki Apnay Junoon  e  Narasaa   Nay Warna   yaan

Zarra Zarra Rukash  e  Khursheed  e   Aalamtaab Tha

Aaj Kiun  Parwaah na Ki , Apnay Aseeron Ki Tujhay

Kal Talak Tera  Dil Bhi Mehr  o  Wafa Ka Baab Tha

Yaad kar Wo Din Keh Har Ik Halqa Teray Daam Ka

Intezaar  e  Said Men Ik Deeda   e  Bekhaab Tha

Main Nay Roka Raat GHALIB Ko Wagarna Dekhtay

Uss Ki Sail  e  Giya Men Gardun Kaf  e  Selaab Tha

Poet:L Mirza Ghalib 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -