ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب

ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب
ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب

  

ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب

خونِ جگر ، ودیعتِ مژگاں یار تھا

اب میں ہوں اور ماتمِ یک شہرِ آرزو

توڑا جو تو نےآئنہ ، تمثال دار تھا

گلیوں میں میری نعش کو کھینچے پھرو، کہ میں

جاں دادۂ ہوائے سرِ رہگزار تھا

موجِ سرابِ دشتِ وفا کا نہ پوچھ حال

ہر ذرہ ، مثلِ جوہرِ تیغ ، آب دار تھا

کم جانتے تھے ہم بھی غمِ عشق کو ، پر اب

دیکھا تو کم ہوے پہ غمِ روزگار تھا

شاعر: مرزا غالب

Aik Aik Qatray  Ka Mujhay Dena Parra Hisaab

Khoon  e  Jigar , Wadyat  e  Mizgaan  e  Yaar Tha

Ab MainHuN aor maatam  e  Yak  e  Sheh  e  Aarzu

Torra Jo Tu Nay Aaina Timsaal Daar Tha

Galiun Men Naash Ko Khincho Phiro Keh Main 

Jaan daada  e  hawaa  e  Sar  e  Rehguzaar Tha

Moj  Saraab  e   Dasht   e  Waf ka Na Pooch Haal

Har Zarra Misl  e  Johar Tegh  e  Aabdaar Tha

Kam jaantay Thay Ham Bhi Gham  e  Eshq  Ko  Par Ab

Dekha To Kam Huay Pa Gham  e  Rozgaar Tha

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -