آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا
آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

  

بس کہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا

آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

گریہ چاہے ہے خرابی مرے کاشانے کی

در و دیوار سے ٹپکے ہے بیاباں ہونا

واۓ دیوانگیِ شوق کہ ہر دم مجھ کو

آپ جانا اُدھر اور آپ ہی حیراں  ہونا

جلوہ از بسکہ تقاضائے نگہ کرتا ہے

جوہرِ آئینہ بھی چاہے ہے مژگاں ہونا

عشرتِ قتل گہِ اہل تمنا، مت پوچھ

عیدِ نظّارہ ہے شمشیر کا عریاں ہونا

لے گئے خاک میں ہم داغِ تمنائے نشاط

تو ہو اور آپ بہ صد رنگِ گلستاں ہونا

عشرتِ پارۂ دل، زخمِ تمنا کھانا

لذت ریشِ جگر، غرقِ نمکداں ہونا

کی مرے قتل کے بعد اس نے جفا سے توبہ

ہائے اس زود پشیماں کا پشیماں ہونا

حیف اُس چار گرہ کپڑے کی قسمت غالبؔ!

جس کی قسمت میں ہو عاشق کا گریباں ہونا

شاعر: مرزا غالب

Bas keh Dushwaar Hay Hhar Kaam Ka Aaasaan Hona

Aadmi Ko Bhi Muyassar nahen insaan Hona

Girya Chaahay hay Kharaabi Miray kaashaanay Ki

Dar  o  Dewaar Say Tapkay Hay Bayabaan Hona

Waaey Dewaangi  e  Shoq Keh Har dam Mujh Ko

Aap Jaan Udhar Aor Aap Hi  Hairaan Hona

Jalwaa Az Baskeh taqaaza  e  Nigah karta Hay

Johar  e  Aaina Bhi Chaahay Hay Mizgaan Hona

Eshrat  e  Qatl Geh Ehl  e  Tamanna mat Pooch

Eid  e  Nazzaara Hay Shamsheer ka Urayaan Hona

Lay Gaey Khaak Men Ham Daagh  e  Tamanna e  Nishaat

Tu Ho Aor Aap ba Sad rang Gulistaan Hona

Eshrat   e  paara  e  Dil  Zakhm  e  Tamanna Khaana

Lazzat  e  Resh Jigar , Gharq  e  Nakamdaan Hona 

Ki Miray Qaatl K baad Uss Nay Jafaa Say Toba

Haaey IUss Zood  e  Pashemaan ka Pashemaan Hona

Haif Uss Chaar Giraah Kaprray Ki Qismat GHALIB

Jiss Ki Qismat  Men Ho AAshiq ka Girebaan Hona

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -