ہیپاٹائٹس قابل علاج لیکن۔۔۔

ہیپاٹائٹس قابل علاج لیکن۔۔۔
ہیپاٹائٹس قابل علاج لیکن۔۔۔

  

نیویارک (بیورو رپورٹ) امریکی ادویات ساز کمپنی کی ایجاد کردہ دوائی ”سوالدی“ تین ماہ کے اندر ہیپاٹائٹس سی 90 فیصد تک مریضوں کو صحتیاب کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے تاہم مسئلہ یہ ہے کہ اس کی روزانہ کی ”ڈوز“ کی قیمت 1 ہزار ڈالر (یا ایک لاکھ پاکستانی روپے) ہے۔ جلیاڈسائنسز کی جانب سے مقرر کردہ اس قیمت پر امریکی انشورنس کمپنیاں اور عوامی نمائندے سراپا احتجاج ہیں۔ مزید یہ کہ صرف اس سال اس کی سیلز 7 سے 10 ارب ڈالر ہوسکتی ہیں۔ ماہرین کے مطابق ہیپاٹائٹس سی کی موثر تین دوا یہی ہے۔ ڈاکٹروں پر انشورنس کمپنیوں کی جانب سے دباؤ ڈلا جارہا ہے کہ اس دوا کو استعمال نہ کریں لیکن ان کا کہنا ہے کہ اس کا متبادل موجود نہیں۔ دوسری جانب کمپنی کا موقف ہے کہ دیکھا جائے تو یہ دوا سستی ہے کیونکہ یہ مریض کو بہت کم عرصے میں تندرست کردیتی ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اسی دوا کی مکمل ٹریٹمنٹ کی مصر میں قیمت 900 ڈالر یا (90 ہزار پاکستانی روپے) ہے۔ دوا بنانے والی کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ ہر ملک میں اپنی ادویات کی قیمتیں لوگوں کی قوت خرید کے مطابق رکھتی ہے اور امریکی حکومت قانون کے مطابق قیمتوں کا تعین نہیں کرسکتی۔

مزید :

تعلیم و صحت -