مزارات پر دہشت گردی کیخلاف ملک گیر یومِ احتجاج

مزارات پر دہشت گردی کیخلاف ملک گیر یومِ احتجاج
مزارات پر دہشت گردی کیخلاف ملک گیر یومِ احتجاج
کیپشن: lahore-448x249.jpg

  

لاہور(سٹاف رپورٹر)جمعیت علماء پاکستان کے زیر اہتمام سُنی تنظیمات کی ’’آل پارٹیز کانفرنس‘‘کے اعلان مطابق شام میں صحابہ کرام اور اہل بیت کے مزارات مقدسہ پر دہشت گردی کے واقعات اور ان کی بے حرمتی کے خلاف ملک بھر میں ’’یوم احتجاج‘‘ منایا گیا۔لاہور میں تمام مساجد میں علماء و خطباء نے شام میں مزارات مقدسہ اور صحابہ کرام کے مزارات کی بے حرمتی کے واقعات سے اجتماعات کو آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ شام میں حضرت سیدنا اویس قرنیٰ ،حضرت عمار بن یاسر،حضرت خالد بن ولید اور حضرت سیدہ زینب رضی اللہ عنہا کے مزارات پر دہشت گردی کے واقعات انتہائی شرمناک اور قابل مذمت ہیں مقررین نے کہا کہ ان پاکان اُمت کے مزارات اور مساجد کی بے حرمتی پرمسلم حکمرانوں اور نام نہادانسانی حقوق کی تنظیموں کا ان جلیل القدرمزارات پر دہشت گردی کے واقعات پر خاموشی،بے غیرتی اور بے حسی کی دلیل ہے۔مندر اور گردواروں سمیت غیر مسلموں کی عبادت گاہوں کی حفاظت مسلم حکومتوں کی ذمہ داری ہے مگر صحابہ کرام کے مزارات پر بم باری اور دہشت گردی پر عالم اسلام کی خاموشی بے غیرتی کی بہت بڑی دلیل ہے۔مسلم حکمران اسلامی غیرت اور حمیت سے خالی ہو چکے ہیں ۔اس لئے اہل سنت کوبیدار ہو کرشعائر اللہ اور مقامات مقدسہ کی حفاظت کے لئے میدان عمل میں نکلنا ہو گا۔اگر اب بھی ہم نے اسلامی غیرت اور قربانی کے جذبے کامظاہرہ نہ کیا تو پھر ہماری داستاں بھی نہ ہو گی ان خیالات کا اظہار لاہور میں جمعیت علماء پاکستان کے رہنماؤں پیر اعجاز احمدہاشمی ، علامہ قاری محمد زوار بہادر ،علامہ خادم حسین رضوی ،ڈاکٹر اشرف آصف جلالی ،مفتی محمد خان قادری ،مولانا سید خرم ریاض شاہ،صاحبزادہ عبدالمصطفےٰ ہزاروی ،حافظ عبدالستار سعیدی،صاحبزادہ رضائے مصطفےٰ،مولانا محمد علی نقشبندی ،مولانا راغب حسین نعیمی،مولانا محمد قاسم علوی ،پیر سید محمد عثمان نوری، پروفیسر احمد رضا خان ،مفتی محمد حسیب قادری،میاں محمد حنفی سیفی،حاجی محمد شفیق کیلانی،سید مظفر حسین شاہ ،مولانا محمد اصغر شاکر ،مفتی اسد اللہ نوری ،مفتی عاشق حسین شاہ ،مولانامحمد عارف رضوی ،مولانا عبدالشکور سیالوی ،مولانا مختار احمد صدیقی،صاحبزادہ عبدالرؤف نورانی ،مولانا منیر قادری،رشید احمد رضوی، ایم اے مہر ،رانا رحمت علی ،مفتی جمیل قادری،مولانا نصیر احمد نورانی ،صاحبزادہ سید انعام الحسنین، ملک محبوب الرسول قادری،پیر ضیاء المصطفےٰ حقانی،مولانا خادم حسین مجددی، مولانا عبدالحمیدنقشبندی،ڈاکٹر سید خالد حسین کاظمی،پیر سید محمد مدثر علی کاظمی،حافظ احسان الحق ،حافظ ندیم نقشبندی،حاجی نذیر احمد مغل،مولانا محمد سرفراز قادری سمیت دیگر تنظیمات کے نمائندگان علماء اور مشائخ نے بھی ’’ یوم احتجاج پر خطاب کیا۔ دریں اثناء جمعیت علماء پاکستان کے مرکزی دفتر میں موصولہ اطلاعات کے مطابق جمعیت علماء پاکستان کے سیکرٹری جنرل صاحبزادہ شاہ محمد اویس نورانی ،ڈاکٹر جاوید اختر ،ابو منصور قادری،مفتی عبدالشکور رضوی ،مفتی عبدالرشید جامی نے فیصل آباد میں علامہ رجب علی نعیمی،محمد صدیق راٹھور،محمدامین نورانی، محمد مستقیم نورانی اوردیگرنے کراچی میں مفتی محمد ابراہیم قادری نے جامعہ قادریہ سکھر میں ، حافظ محمد حسین اور مفتی مختار رضوی نے راولپنڈی میں، حامد رضا بھٹی نے اسلام آباد میں، پروفیسرجاوید اعوان نے چھانگا مانگا میں،علامہ محمد اقبال اظہری ،مفتی ہدایت اللہ پسروری نے جامعہ ہدایت القرآن ملتان میں،جے یو پی پنجاب کے نائب صدر علامہ نور احمد سیال سعیدی ،چودھری ریاض احمد اور ڈاکٹر ریاض احمد نے رحیم یار خان میں ، ’’یوم احتجاج‘‘ کے موقع پر مختلف ریلیوں اور احتجاجی جلسوں سے خطابات کیے۔اس کے علاوہ گوجرانوالہ، سیالکوٹ ،ساہیوال،سرگودھا،گجرات ،جہلم ،اوکاڑہ،رحیم یار خان،بہاولنگر، پشاور، ڈیرہ اسماعیل خان اور کوئٹہ میں بھی ’’یوم احتجاج‘‘ منایا گیا۔ دریں اثناء داتا دربار چوک میں حتجاجی مظاہرے سے عالمی جماعت اہلسنت کے مرکزی امیر مفتی پیر سید مصطفی اشرف رضوی، حقوق اہلسنت محاذ کے مرکزی امیر پیر سید شاہد حسین گردیزی، تحریک تحفظ ناموس رسالت کے پروفیسر احمد حسین ایڈووکیٹ، خواجہ معین الدین چشتی ٹرسٹ کے حاجی حمید فاضل چشتی، مرکزی میلاد کمیٹی پاکستان کے چیئرمین سید مختار اشرف رضوی، دفاع اسلام محاذ کے علامہ دلنواز نورانی، بزم برکاتیہ کے علامہ آصف برکاتی، گردیزی ویلفیئر سوسائٹی کے پیر محمد حسین، انٹرنیشنل بزم قادریہ جیلانیہ کے میاں قیصر اقبال، مشائخ اہلسنت پاکستان کے پیر خادم حسین شرقپوری ، مفتی غلام حسن، مولانا دلنواز رضوی، علامہ محبت علی قادری اور دیگر مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ شام میں صحابہ کرام اور اہلبیت اتحاد کے علیہم رضوان کے مزارات کی بے حرمتی کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ مزارات پر دہشت گردی کے واقعات شرمناک او ر قابل مذمت ہیں۔ انھوں نے کہا کہ شام میں مزارات کی بے حرمتی عالم اسلام کے مسلمانوں کی عقیدت کو چیلنج ہے۔ صحابہ کرام کے مقدس مزارات کے تحفظ کے لئے عالم اسلام کے حکمرانوں کو مشترکہ ٹھوس حکمت عملی تیار کرنی چاہیے۔ انھوں نے کہا کہ صحابہ کرام اور اہلبیت کے مزارات کو ایک منظم سازش کے تحت نشانہ بنایا جارہا ہے۔ اب خاموش رہنے کا وقت نہیں بلکہ دشمنانِ اسلام کے خلاف جہاد کرنے کا وقت ہے۔ پاکستان سمیت دنیا بھر کے مسلمان حکمران فوراً اسلامی سربراہی کانفرنس کا انعقاد کریں اور دشمنانِ اسلام کے خلاف جہاد کا اعلان کریں۔ علماء

نے کہ کہ اب احتجاج کا یا مذمتی قراردادوں کا وقت نہیں بلکہ مقدم مزارات کی بے حرمتی کرنے والوں کا ایک ہی علاج الجہاد، الجہاد، الجہاد۔

مزید :

لاہور -