سیون اپ پھاٹک 5 گاڑیوں کو آگ لگنے والی آگ معمہ بن گئی کئی خاندانوں کا روزگارختم

سیون اپ پھاٹک 5 گاڑیوں کو آگ لگنے والی آگ معمہ بن گئی کئی خاندانوں کا ...

  

لا ہو ر (شعیب بھٹی )سیو ن اپ پھا ٹک کے قر یب 5گا ڑ یو ں کولگنے وا لی آ گ پر اسرا ر معمہ بن گئی۔3دن گز ر نے کے بعد بھی پو لیس نہ تو مقد مہ در ج کر سکی ہے اور نہ ہی تفتیش کو ایک انچ آگے بڑھانے میں کامیاب ہوئی ہے ۔ شا ٹ سر کٹ سے لگنے وا لی آ گ نے ڈ یز ل گا ڑ یو ں کو جلا کر بھسم کیسے کیا ؟ایک گا ڑ ی کی شا ر ٹ وا ئر نگ سے دوسر ی گا ڑ یا ں آ گ کی لپیٹ میں کیسے آ گئیں ؟آ گ لگنے و ا لی گا ڑ ی کے فیو ل ٹینک تک آ گ کیوں نہ پہنچ سکی؟ جبکہ ر یسکیو ترجمان کے مطا بق ان کی گا ڑ یا ں 6منٹ بعد جائے وقوعہ پرپہنچ گئی تھیں تو پھر تما م گا ڑ یا ں مکمل طو ر پر کیسے جل گئیں؟ پر اسر ر آ تشزد گی نے بھی کئی سو لو اں کو جنم دے د یا ۔ پو لیس کا مو قف یہی ہے کہ گا ڑ یا ں شا رٹ سر کٹ کے با عث جل گئی ہیں جبکہ گا ڑ یو ں کے ما لکا ن کا کہنا ہے کہ ان کی زند گی بھر کی جمع پو نجی را کھ ہو گئی ہے اور اب وہ بچو ں کا پیٹ کیسے پا لے گیں۔تفصیلا ت کے مطا بق گلبرگ کے علاقہ سیون اپ بھاٹک کے قریب اوورہیڈ برج کے نیچے کنٹو نمنٹ بو ر ڈ سے منظو ر شد ہ مقامی افراد بلا ل کو 9لا کھ سا لا نہ میں ٹھیکہ فرو خت کیا گیاتھا جو کنٹونمنٹ بو ر ڈ نے وا پس لے لیا ہے ۔ پا رکنگ سٹینڈپر لو گ ا پنی بسیں،کاریں ،پارک کرتے اور ما ہانہ 6سو سے 35سو رو پے تک سٹینڈ پر اپنی گا ڑیو ں کی حفا ظت کے لئے ر قم د یتے تھے ۔3 لا کھ روپے مالیت کی چلنے والی پک اپ گاڑی کے مالک لیاقت کا کہنا تھا کہ اس نے ا دھا ر کہ پیسو ں سے لی گئی رقم سے بڑ ی مشکل سے محنت مز دو ر ی کے لئے پک آپ خریدی تھی جو کہ میر ی ز ند گی بھر کی کما ئی تھی جوکہ پر اسرا ر طو ر پر جل کربھسم ہو گئی ہے۔میر ے 6بچے ہیں رو انہ کی بنیا د پر محنت مزدو ر ی کر کہ اپنے گھر کا خر چہ چلا تا ہو ں ۔ متا ثر ہ نے مز ید بتا یا کہ کہ اس کے پا س 15سورو پے بھی نہیں ہیں جو لفٹر کو د ے کر اپنی جلی ہو ئی گا ڑ ی کو ور کشا پ لے جا ئے ۔اسی طر ح ر ضوا ن اعظم ،طا رق مقصو د بخا ر ی سمیت عا صم کی بھی یہی کہا نی تھی کہ نہ تو کو ئی حکو مت کے کسی اہلکا ر نے را بطہ کیا اورنہ ہی پو لیس نے مقد مہ در ج کیا جبکہ پرا ئیویٹ کمپنی کے ٹھیکدار یہ کہ کر بری الزمہ ہوگئے کہ ریسکیو اہلکار دیر سے پہنچے اور گاڑیاں جل گئیں ۔جبکہ ر یسکیو تر جان کا کہنا ہے کہ6منٹ میں ر یسکیو ں ٹیمیں موقع پر پہنچ گئی تھیں اور7فا ئر برگیڈگا ڑیو ں نے آپر یشن مکمل کرلیا تھا ۔پولیس کے مطابق سٹینڈ پر کھڑی ایک کا ر کی اچانک وائرنگ شارٹ ہونے سے آگ کے شعلے نکلنا شروع ہوگئے جنہوں نے دیکھتے ہی دیکھتے کے قریب قریب قطار میں کھڑی دیگر 3بسوں 2کاروں اور ایک کیری ڈبہ کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا ۔آگ اس قدر شدید تھی کہ شعلے دور دور تک دکھائی دے رہے تھے ۔موقع پر موجود لوگوں نے اپنی مدد آپ کے تحت آگ پر قابو پانے کی کوشش کی مگر آگ بڑھتی گئی ۔واقعہ کی اطلاع ملتے ہی گاڑیوں کے مالکان بھی موقع پر پہنچ گئے جو آنکھوں کے سامنے عمربھر کی کمائی کو جلتا دیکھ کر آبدیدہ ہوگئے ۔بعدازاں واقعہ کی اطلاع ملتے ہی ریسکیو سمیت دیگر امدادمی ٹیمیں موقع پر پہنچ گئیں جنہوں نے مسلسل کوشش کے بعد آگ پر قابو پایا ۔پولیس کا کہنا ہے کہ تفتیش کی جارہی ہے کہ آگ حادثاتی طور پر لگی ہے یا پھر کسی نے لگائی ہے بہرحا ل جلد ہی حقائق سامنے آجائیں گے۔دوسری جانب ذرائع کا کہنا ہے کہ فیول ٹینک میں آگ کیوں نہیں لگی تاہم حالات مشکوک ہونے کی وجہ سے کئی سوال جنم لے رہے ہیں ۔متاثرین کا کہنا ہے کہ پولیس اس حوالے سے تفتیش کا دائر ہ کار بڑھانے میں ٹال مٹول سے کام لے رہی ہے جو کہ انتہائی افسوس ناک ہے ۔ متاثرہ افراد نے حکام بالا سے فوری نقصان کے آزالے اور اس میں ملوث افراد کے خلاف کارروائی کی اپیل کی ہے۔

مزید :

علاقائی -