پولیس نے ماں بھی نہ بخشی

پولیس نے ماں بھی نہ بخشی
پولیس نے ماں بھی نہ بخشی
کیپشن: pic

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہورہائیکورٹ نے پولیس چھاپے کے دوران بوڑھی خاتون کی ہلاکت کے واقعہ کا نوٹس لے لیا اور اس ضمن میں ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن شیخوپورہ کوواقعہ کی رپورٹ ایک ہفتے میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔شیخوپورہ کے نواحی علاقے بھکی میں پولیس پارٹی نے ایک ملزم کی گرفتاری کے لئے چھاپہ مارا۔ جیسے ہی پولیس گھر میں داخل ہوئی ملزم کی بوڑھی والدہ مقبول بی بی نے پولیس اہلکاروں کو روکنے کی کوشش کی۔ اسی دوران ایک پولیس اہلکار نے خاتون کو دھکا دیا جو کہ بجلی کے کھمبہ کے ساتھ جاکرٹکرائی اور موقع پر ہی دم توڑ گئی۔ واقعہ کی سنگینی کے پیش نظر پولیس پارٹی موقع سے فرار ہوگی ۔بعدازاں متوفی خاتون کے رشتہ داروں نے علاقہ کے دیگر لوگوں کے ہمراہ احتجاج کرتے ہوئے لاہور،سرگودھا،فیصل آبادروڈ بلاک کردی۔سات گھنٹے تک احتجاج کرنے کے بعد پولیس کی جانب سے واقعہ میں ملوث اہلکاروں کوگرفتارکرنے کی یقین دہانی پر مظاہرین منتشرہوگئے۔ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر کی ہدایت پر تھانہ سٹی اے ڈویژن پولیس نے اے ایس آئی سلام ڈوگر، تین اہلکاروں اور درخواست گزاروں غلام رسول اور حاکم بشیر کے خلاف قتل سمیت دیگر دفعات کے تحت مقدمہ درج کرلیا۔عدالت عالیہ لاہورکے شکایات سیل نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج شیخوپورہ کو واقعہ کی تفصیلی رپورٹ ایک ہفتے میں پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

مزید :

لاہور -