توہین رسالت کے مرتکب میاں بیوی کو سزائے موت

توہین رسالت کے مرتکب میاں بیوی کو سزائے موت
توہین رسالت کے مرتکب میاں بیوی کو سزائے موت

  

گوجرہ(مانیٹرنگ ڈیسک) ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج گوجرہ محمد عامر حنیف نے توہین رسالت کا جرم ثابت ہونے پر عیسائی میاں بیوی کو سزا موت کا حکم سنایا ہے۔گوجرہ کے رہائشی شوکت مسیح اور اس کی اہلیہ شگفتہ بی بی پر الزام تھا کہ وہ موبائل فون کے ذریعے ایس ایم ایس کر کے توہین رسالت پر مبنی پیغامات دوسرے لوگوں کو ارسال کیا کرتے تھے۔گوجرہ کے ایک رہائشی محمد حسین نے 16مئی 2013ء کو تھانہ گوجرہ میں دفعہ 295Cکے تحت مقدمہ درج کروایا کہ دونوں میاں بیوی نے میرے موبائل پر ایس ایم ایس بھیجا ہے جو توہین رسالت کے زمرے میں آتا ہے اس سے مجھ سمیت کئی مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی ہے۔اس مقدمہ کے بعد علاقہ بھر میں سخت احتجاج بھی ہوا اور پولیس نے میاں بیوی کو گرفتار کر کے ان کا چالان عدالت میں پیش کر دیا جس پر گزشتہ روز ایڈیشنل سیشن جج نے مقدمہ کی تقریباً ایک سال سماعت کے بعد حکم سنایا کہ دونوں پر توہین رسالت کا الزام ثابت ہوتا ہے اس جرم میں انہیں موت کی سزا دی گئی۔اس مقدمہ کی سماعت کے دوران میاں بیوی کا موقف تھا کہ ہم نے توہین رسالت نہیں کی یہ الزام غلط ہے،مدعی کسی کے ایماء پر ہمارے خلاف بے بنیاد پراپیگنڈہ کر رہا ہے۔

مزید :

جرم و انصاف -