صرف 57روپے کے لئے جان لے لی

صرف 57روپے کے لئے جان لے لی
صرف 57روپے کے لئے جان لے لی

  

نیویارک (بیورو رپورٹ) امریکی کانگریس کے حکام نے ایک کیس کی سماعت کے دوران گاڑیاں بنانے والی کمپنی جنرل موٹرز کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ یہ کیس جنرل موٹرز کے ایک ماڈل میں خرابی سے متعلق تا جو کہ کانگریس کمیٹی کے مطابق اب تک13 افراد کی ہلاکت کا سبب بن چکا ہے۔ رپورٹ کے مطابق جنرل موٹرز کی جانب سے بنائی جانے والی گاڑیوں کے اگنیشن سوئچ میں خرابی تھی کہ جب گاڑی کو زور کا جھٹکا لگتا یا تیزرفتاری سے بریکر کراس کرتے ہوئے اس کا انجمن بند ہوجاتا ہے۔ اس خرابی کے باعث ہونے والے حادثات میں 13 افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور ارکان کے پاس موجود شواہد کے مطابق کمپنی کو اس خرابی کا معلوم تھا لیکن انتظامیہ نے اس لئے درست نہ کی کہ تمام گاڑیوں میں اس خرابی کو دور کرنے کے لئے خرچہ بہت زیادہ آنا تھا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ ایک سوئچ میں تبدیل کئے جانے والے حصے کی قیمت صرف 57 (یعنی 57 پاکستانی روپے) ہے۔ تاہم کمپنی کے ترجمان کا کہنا تھا کہ اس نقص کا پتا لگانے میں اتنی دیر کیوں لگی اس کی تحقیقات کی جائیں گی اور اگر کوئی خرابی ہو تو ہم قیمت کی پرواہ کئے بغیر اسے دور کرتے ہیں۔

مزید : بین الاقوامی