عالمی یوم قدس اور مسئلہ فلسطین کیلیے عالمی حمایت کی ضرورت

عالمی یوم قدس اور مسئلہ فلسطین کیلیے عالمی حمایت کی ضرورت
عالمی یوم قدس اور مسئلہ فلسطین کیلیے عالمی حمایت کی ضرورت

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

تحریر:حسین امیر عبداللہیان , وزیر خارجہ اسلامی جمہوریہ ایران 

اس سال ہم عالمی یوم قدس ایسے حالات میں منانے جا رہے ہیں جب عالم انسانیت کے سامنے  بڑے جرائم اور تاریخی نسل کشی رونما ہو رہی ہے ۔

 فلسطین اور بالخصوص غزہ میں گزشتہ 6 ماہ میں جو گہرا انسانی المیہ رونما ہوا ہے وہ افسوسناک اور غمناک ہے۔

مظلوم اور مزاحمت کرنے والی عظیم فلسطینی قوم کے حقوق کی ایک اور تاریخی خلاف ورزی کی جا رہی ہے، جس میں کسی قوم کے مقبوضہ علاقے کے جغرافیائی دائرہ کار میں بین الاقوامی قوانین اور ضوابط کی خلاف ورزی، اور طاقت کا واضح استعمال اور ہر قسم کے جرائم کافلسطینی زمین کے اصل مالکان کے خلاف اسرائیل کی نام نہاد اور ناجائز حکومت کیطرف سے ارتکاب شامل ہیں 

ان دنوں نہ صرف معصوم فلسطینی عورتیں اور مرد اور بے بس اور معصوم فلسطینی بچوں کو یہ مجرم زمین پر گھسیٹ رہے ہیں بلکہ اسپتال، طبی مراکز، مساجد اور گرجا گھروں کو بھی اس جعلی اور حیوان نما حکومت کے اہلکار اور فوجی تباہ کر رہے ہیں اور وہ ان کے ہاتھوں سے محفوظ نہیں ہیں۔

بلاشبہ صہیونیوں کے اقدامات انسانی حقوق کی سب سے واضح اور بنیادی  خلاف ورزی ہیں ۔ جونسل کشی اور انسانیت کے خلاف مشترکہ جرائم کے زمرے میں آتے ہیں۔ 
غزہ کی پٹی میں نسل کشی اور ہر قسم کے جنگی جرائم کا تسلسل، تقریباً 6 ماہ میں 33 ہزار سے زائد فلسطینیوں کا قتل عام، جن میں اکثریت خواتین اور بچوں کی ہے، اس کے ساتھ ساتھ پوری غزہ کی پٹی کے لیے جعلی اسرائیلی حکومت کا انسانی امداد  اور خوراک بھیجنے سے روکنا اور  اور خواتین اور بچوں کی نسل کشی کو جاری رکھنا اور انہیں مصر کے صحرائے سینا اور اردن کی سرزمین پر زبردستی منتقل کرنے کے مقصد سے غزہ کے باشندوں کو بھوک سے مارنے کے لیے طاقت کے استعمال نے اس صدی ک  سب سے بڑے انسانی بحران کو جنم دیا ہے۔

اب یہ واضح ہو چکا ہے کہ غزہ کی پٹی کا مکمل محاصرہ کرنے اور فوری اور کافی انسانی امداد کی ترسیل کو روکنے میں اسرائیلی حکومت کے خطرناک مقاصد میں سے ایک سماجی اور شہری تباہی کے حالات پیدا کرنا اور زندگی کے تمام آثار کو تباہ کرنا ہے۔  فلسطین کی تاریخی اور تہذیبی شناخت کا خاتمہ ہے۔غزہ کی پٹی کے مکینوں کو زبردستی نقل مکانی کرنے کی کوشش مجرم صیہونی حکومت کی شیطانی پالیسی کا واضح ثبوت ہے۔

آج پہلے سے زیادہ اس کی ضرورت ہے کہ غزہ کی پٹی میں صیہونی حکومت کی جانب سے نسل کشی اور قتل عام کے عناصر کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل اور عالمی عدالت انصاف اور انصاف کے بین الاقوامی اداروں کی توجہ دلائی جائے اور موثر روک تھام اور تادیبی اقدامات کیے جائیں۔
      اس کے علاوہ، ایک فوری اور اہم اقدام کے طور پرضروری ہے، اقوام متحدہ، عالمی برادری، عالمی ریڈ کراس کی مدد سے   رفح کراسنگ اور دیگر انسانی کراسنگ  پوائنٹس کو جلد از جلد مکمل طور پر دوبارہ کھولے تاکہ غزہ کے خواتیں، بچوں اور عام عوام کے لیے نامل زندگی کے لیے حالات پیدا ہوں۔
بین الاقوامی فورمز میں، ہم نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور عالمی ریڈ کراس کے ساتھ مسلسل بات چیت میں انسانی ہمدردی کے شعبے میں وسیع مشاورت کی ہے۔ اس تمام بات چیت اور جو گفتگو اسلامی ممالک کیساتھ ہوئی اس میں ترجیحی بنیادوں پر امداد کی فراہمی اور جنگ بندی کی ضرورت پر تاکید کی بلاشبہ ہم نے دیکھا ہے کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور انٹرنیشنل ریڈ کراس آرگنائزیشن کے سربراہ نے اہم اقدامات کیے ہیں لیکن عمومی طور پر وائٹ ہاؤس اور بعض مغربی حکومتوں کے اسرائیلی حکومت کے ساتھ مکمل تعاون کی وجہ سے یہ انسانی کوششیں اب تک ناکام رہی ہیں اور مطلوبہ ہدف حاصل نہیں ہوا۔

یہ انتہائی افسوسناک ہے کہ غزہ کی پٹی پر غاصب صیہونی حکومت کے وحشیانہ حملوں کو تقریباً 6 ماہ گزر جانے کے باوجود عالمی برادری بالخصوص اقوام متحدہ اور اس تنظیم کی سلامتی کونسل کی جانب سے دائمی بے عملی کا مظاہرہ کیا جا رہا ہے۔ ، جس کا بنیادی کام امن اور بین الاقوامی  سلامتی کی یقینی بنانا ہے۔
 یہ بات بالکل واضح ہے کہ امریکہ اس جنگ کو جاری رکھنے اور اسے جاری رکھنے میں ایک اہم فریق رہا ہے، دوسری طرف توقع یہ تھی کہ اسلامی تعاون تنظیم مختلف سیاسی اور اقتصادی صلاحیتوں اور دباؤ کو استعمال کرتے ہوئے جنگ بندی میں اپنا کردار ادا کرے گی۔  اس کے علاوہ، ایک فوری اور اہم اقدام کے طور پرضروری ہے، اقوام متحدہ، عالمی برادری، عالمی ریڈ کراس کی مدد سے   رفح کراسنگ اور دیگر انسانی کراسنگ  پوائنٹس کو جلد از جلد مکمل طور پر دوبارہ کھولے تاکہ غزہ کے خواتیں، بچوں اور عام عوام کے لیے نامل زندگی کے لیے حالات پیدا ہوں۔
بین الاقوامی فورمز میں، ہم نے اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور عالمی ریڈ کراس کے ساتھ مسلسل بات چیت میں انسانی ہمدردی کے شعبے میں وسیع مشاورت کی ہے۔ اس تمام بات چیت اور جو گفتگو اسلامی ممالک کیساتھ ہوئی اس میں ترجیحی بنیادوں پر امداد کی فراہمی اور جنگ بندی کی ضرورت پر تاکید کی بلاشبہ ہم نے دیکھا ہے کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور انٹرنیشنل ریڈ کراس آرگنائزیشن کے سربراہ نے اہم اقدامات کیے ہیں لیکن عمومی طور پر وائٹ ہاؤس اور بعض مغربی حکومتوں کے اسرائیلی حکومت کے ساتھ مکمل تعاون کی وجہ سے یہ انسانی کوششیں اب تک ناکام رہی ہیں اور مطلوبہ ہدف حاصل نہیں ہوا۔

یہ انتہائی افسوسناک ہے کہ غزہ کی پٹی پر غاصب صیہونی حکومت کے وحشیانہ حملوں کو تقریباً 6 ماہ گزر جانے کے باوجود عالمی برادری بالخصوص اقوام متحدہ اور اس تنظیم کی سلامتی کونسل کی جانب سے دائمی بے عملی کا مظاہرہ کیا جا رہا ہے۔ ، جس کا بنیادی کام امن اور بین الاقوامی  سلامتی کی یقینی بنانا ہے۔
 یہ بات بالکل واضح ہے کہ امریکہ اس جنگ کو جاری رکھنے اور اسے جاری رکھنے میں ایک اہم فریق رہا ہے، دوسری طرف توقع یہ تھی کہ اسلامی تعاون تنظیم مختلف سیاسی اور اقتصادی صلاحیتوں اور دباؤ کو استعمال کرتے ہوئے جنگ بندی میں اپنا کردار ادا کرے گی۔
تاہم، مختلف اجلاسوں کے انعقاد کے باوجود، یہ تنظیم اس میدان میں متوقع اور مؤثر کردار ادا کرنے سے قاصر رہی ہے۔

ہمیں امید ہے کہ رمضان المبارک کے بقیہ ایام میں اسلامی ممالک کی کوششوں اور عالمی برادری کی عملی ذمہ داری سے انسانی امداد بھیجنے اور غزہ کے مظلوم عوام کو قحط سے بچانے کے لیے سنجیدہ اقدامات کیے جائیں گے۔ ہم یہ بھی امید کرتے ہیں کہ اس مقدس مہینے کی برکت سے علاقائی اور بین الاقوامی اسلامی اتحاد اور ہم آہنگی اور مظلوم فلسطینی قوم کی زیادہ مؤثر طریقے سے مدد کرنے کی عالمی کوششیں پہلے سے کہیں زیادہ ظاہر ہوں گی اور مؤثر علاقائی اور بین الاقوامی اقدامات اور روک تھام کے اقدامات سے مظلوم فلسطینی قوم کے خلاف نسل پرست اور صیہونی دہشت گرد حکومت کی بربریت کا جلد خاتمہ ہوگا۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ فلسطینی سرزمین پر موجود دردناک انسانی صورتحال اور جنگی حالات کے باوجود فلسطین کے مسلمان اور غزہ کی پٹی اور مغربی کنارے کے باشندے اپنے وطن کے دفاع کے لیے مضبوط عزم اور ایمان کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اور بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ حقوق اور قابض حکومت اور اس کی مجرمانہ سرگرمیوں کے خلاف  اپنی مزاحمت کو پورے عزم و ارادے کے ساتھ جاری رکھیں گے۔
اس وقت پوری دنیا فلسطین کی صورت حال اور مظلوم لیکن طاقتور لوگو ں پر غمزدہ ہے جن کی ابتر صورتحال انسانیت اور دنیا کے آزاد لوگوں کے دکھوں کا آئینہ دار ہے۔

ہمیں یقین ہے کہ اس تاریخی لمحے میں دنیا کے تمام آزادی پسند اور امن پسند لوگ مطالبہ کرتے ہیں کہ عالمی برادری بالخصوص اقوام متحدہ اور اسلامی ممالک پائیدار امن  فلسطینیوں کے پامال شدہ حقوق کے مکمل تحفظ کے لیے عملی اقدامات کریں گے اور صیہونی حکومت کےغزہ کی پٹی اور مغربی کنارے میں خوفناک جرائم کا خاتمہ ہو گا۔

فلسطینی قوم کے مکمل حقوق کی تکمیل اور اس صدی کے سب سے بڑے اور دردناک قبضے کے خاتمے کی ضرورت پر یقین رکھتے ہوئے اسلامی جمہوریہ ایران کئی دہائیوں سے فلسطینی عوام کے ساتھ فخر کے ساتھ کھڑا ہے۔

اسلامی جمہوریہ ایران نے اس مسئلے کی اہمیت پر تاکید کرتے ہوئے فلسطین عالم اسلام کا اہم ترین مسئلہ اور عالمی برادری کو مغربی ایشیا میں بحران کی اصل اور بنیادی جڑ کے طور پر قبضے پر توجہ دینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے صیہونی حکومت  کو خطے میں عدم تحفظ اور عدم استحکام کی سب سے اہم وجہ کے طور دیکھتے ہوئے  حل کی ضرورت پر یقین رکھتی ہے۔

اس دائمی تاریخی بحران کی جڑ انسانیت اور عالم اسلام کے جسم و ضمیر پر لگے گہرے زخم ہیں 

عالمی یوم قدس، جو کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے عظیم بانی امام خمینیؒ  کا اقدام ہے، مسئلہ فلسطین کی طرف پوری دنیا کی ذمہ دارانہ توجہ دلانے کے ساتھ ساتھ متحدہ اور عالمی  سطح پر فلسطین کے مظلوم عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی اور غاصب صیہونی حکومت کے خلاف نفرت اور بیزاری کا اظہار کرنا اور فلسطین کے اس پرانے اور دردناک بحران کی اصل جڑوں پر ذمہ دارانہ توجہ دینے کا بہترین موقع ہے۔

 غاصب صیہونی حکومت اور اس حکومت کے معروف حامیوں نے الاقصیٰ طوفان آپریشن پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے، جو فلسطینی عوام کی طرف سے ہر قسم کے جرائم اور ان کے فطری حقوق کی خلاف ورزیوں، قتل و غارت گری اور ان کو دبانے کے ساتھ ساتھ ان کی سرکوبی ، بیت المقدس اور اسلامی مقدسات کی توہین کے خلاف ایک ناگزیر ردعمل تھا ، مزاحمت اور  فلسطینی قوم پر الزام لگا کر ان کو غزہ میں جنگ کا آغاز کرنے والےاور اپنی خامیاں خیالی میں دنیا کی رائے عامہ کو حقیقت اور فلسطین کے بحران کی اصل جڑ سے ہٹانے کی کوشش کی ہے۔  جب کہ بحران کی اصل جڑ ایک جعلی اور بے بنیاد حکومت کا فلسطینی سرزمین پر 75 سالہ قبضہ اور ایک عظیم قوم کے بنیادی، فطری اور قانونی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔

جب تک بحران کی اصل جڑ پر سنجیدگی سے غور  نہیں کیا جائے گا اور اس کے حل کے لیے ذمہ دارانہ اقدامات نہ کیے گئے تو خطے اور دنیا میں پائیدار امن و سلامتی قائم نہیں ہو سکے گی۔

عالمی یوم قدس ایک حقیقی ذمہ دار اور پائیدار حل کے لیے سوچنے کا موقع ہے۔

 جب تک بحران کی اصل جڑ پر سنجیدگی سے توجہ نہیں دی جائے گی اور اس کے علاج کے لیے ذمہ دارانہ اقدامات نہیں کیے جائیں گے، خطے اور دنیا میں دیرپا امن و سلامتی قائم نہیں ہو سکے گی۔ عالمی یوم قدس اصل، ذمہ دار اور پائیدار  حل کے بارے میں سوچنے کا ایک موقع ہے۔

 اسلامی جمہوریہ ایران نے مسئلہ فلسطین کے لیے جمہوری اقدام کی منصوبہ بندی کرنے اور اسے اقوام متحدہ میں باقاعدہ رجسٹر کروا کے ایک ذمہ دارانہ اقدام کے ذریعے جبر اور قبضے کے خلاف قانونی مزاحمت کرنے کے فلسطینی عوام کے فطری اور موروثی حق پر زور دیتے ہوئے یقین دلایا ہے کہ اگر ریفرنڈم کا انعقاد کیا جائے تو اقوام متحدہ کی مدد سے  فلسطین کے  اصل باشندوں بشمول عیسائیوں، مسلمانوں اور یہودیوں کے درمیان یہ حل خطے اور دنیا کے پچھلی صدی کے سب سے پرانے اور دردناک بحران کے خاتمہ کا باعث بن سکتا ہے۔

نوٹ: یہ مصنف کا ذاتی نقطہ نظر ہے جس سے ادارے کا متفق ہونا ضروری نہیں۔
 

مزید :

بلاگ -