نصیر آباد : نابالغ لڑکی کی شادی، تقریب پر چھاپے کے دوران دلہا ،والد، سسر سمیت گرفتار

05 اگست 2014 (16:29)

نصیر آباد (ویب ڈیسک) نصیر آباد میں 14 سالہ لڑکی کی زبردستی شادی زبردستی کرانے کے دوران پولیس نے چھاپہ مار کر27 سالہ دولہا کو والد اور سسر سمیت گرفتار کرکے شادی کی تقریب رکوا دی ،تقریب بند کرانے اور زبردستی داخل ہونے پر باراتیوں نے پولیس پر حملہ کر دیا جس کے بعد پولیس پوری بارات گرفتار کرکے تھانے لے آئی اوررات گئے تک بغیر کارروائی کے درجنوں افراد کو محبوس کیے رکھا۔تفصیلات کے مطابق نواز شریف پارک میں رہائشی محمد اکرام نے 14 سالہ بیٹی فائزہ کا رشتہ قریبی عزیز محمد حیات کے 27 سالہ بیٹے حیات سے طے کیا۔ گذشتہ روز بارات آنے پر نکاح کی تیاری تھی کہ محلے داروں کی طرف سے نابالغ بچی کی شادی پر پولیس کو اطلاع کردی گئی جس پر ایس ایچ اونصیر آباد خالد پرویز نے بھاری نفری کے ہمراہ موقع پر پہنچ کر دولہا مقصود ،اسکے والد حیات اور دلہن فائزہ کے والد اکرام کو حراست میں لیکر تھانے لے آئے ، اس دوران باراتیوں کی طرف پولیس پارٹی پر حملہ کیا گیا تاہم پولیس کی اضافی نفری نے درجنوں باراتی حراست میں لےکر تھانے منتقل کردیئے جہاں رات گئے تک مقدمہ درج نہ ہوسکا۔تھانے کے محرر محرر اصغر کے مطابق لڑکی کمسن نہیں جبکہ اسکی شادی دونوں خاندانوں کی رضا مندی سے طے پائی تھی اوردونوں خاندان آپس میں قریبی رشتے دار ہیں لہذا ان پر کسی بھی قسم کا مقدمہ نہیں بنتا ، رات گئے دونوں افراد کو چھوڑ دیا گیا ہے۔

مزیدخبریں