بجٹ جاری نہ ہو سکا ، ٹیچنگ اور ڈسٹرکٹ ہسپتال مالی مشکلات سے دوچار

بجٹ جاری نہ ہو سکا ، ٹیچنگ اور ڈسٹرکٹ ہسپتال مالی مشکلات سے دوچار

  



لاہور( جاوید اقبال) صوبائی دارالحکومت کے ہسپتالوں کو محکمہ خزانہ 2016-17کے لئے بجٹ جاری نہیں کر سکا جس کے باعث ٹیچنگ اور ڈسٹرکٹ ہسپتال مالی مشکلات سے دو چار ہو گئے ہیں ہسپتالوں کے پاس مریضوں کا مفت علاج معالجہ جاری رکھنے کے لئے فنڈز ختم ہو گئے ہیں جس کے باعث ان ہسپتالوں کو ادویات اور دیگر میڈیکل کا ساز و سامان اور ادویات دینے سے انکار کردیا ہے جس کے باعث ہسپتالوں کی اکثریت نے آؤٹ ڈور کے بعد ان ڈور زیر علاج مریضوں کی اکثریت کو مفت ادویات فراہم کرنے کا سلسلہ روک دیا ہے ۔تفصیلات کے مطابق بجٹ 2016-17 کے لئے محکمہ خزانہ نے محکمہ صحت کی سفارشات اور ہر ہسپتال کے لئے رواں سال کے لئے منظور کئے گئے بجٹ کی رقوم یکم جولائی سے تین جولائی تک پہلی سہ ماہی گرانٹس جاری کرنا تھی جبکہ اس سلسلے میں وزیراعلی پنجاب نے محکمہ خزانہ کو ہدایات جاری کی تھیں کہ ہسپتال کو اس کے منظور شدہ بجٹ کی رقوم یکمشت تین جولائی تک جاری کردی جائیں مگر محکمہ خزانہ اور محکمہ صحت اس پر عمل درآمد نہیں کر سکا ۔بتایا گیا ہے کہ بجٹ جاری کرنے کے لئے مقرر تین جولائی کی ڈیڈ لائن کے بعد ایک مہینہ گزر چکا ہے مگر کسی ایک ہسپتال کو بھی ابھی تک رواں مالی سال کی منظور شدہ رقم جاری نہیں کی گئیں ۔ ہسپتالوں کے پاس بجلی سوئی گیس کے بل اور ملازمین کو تنخواہیں دینے کے بھی فنڈز نہیں رہے اور انہوں نے فنڈز نہ ملنے کی وجہ سے اپنی اپنی آمدن سے فنڈز دینے کا فیصلہ کیا ہے۔دوسری طرف ہسپتالوں کی تعمیرو مرمت اور رنگ و روغن کے لئے بھی فنڈز موجود نہیں ہیں اور وزیراعلی کے چھاپوں کا انتظامیہ کو الگ خوف ہے جس کے باعث ہسپتالوں کے ایم ایس صاحبان کی اکثریت زہنی تناؤ کا شکار ہیں ہسپتالوں کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ رواں مالی سال کا بجٹ جاری نہ ہونے سے میڈیکل اور دیگر ساز و سامان اور سپلائی روکنا شروع کردی ہے جس کی وجہ سے علاج معالجہ کا سلسلہ بند ہو جائے گا ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...