ٹرینوں میں بغیر ٹکٹ سفر کرنے والے 2271افراد گرفتار ، 23لاکھ 96ہزار جرمانہ

ٹرینوں میں بغیر ٹکٹ سفر کرنے والے 2271افراد گرفتار ، 23لاکھ 96ہزار جرمانہ

لاہور ( سٹی رپورٹر)ڈویژنل سپرنٹنڈنٹ پاکستان ریلوے لاہور ڈویژن محمد سفیان سرفراز ڈوگر کی ہدایت پر ڈویژنل کمرشل آفیسر ریلوے غلام فرید نے اپنے اسپیشل ٹکٹ ایگزامینرز گروپ کے ہمراہ مختلف سیکشنوں پر چلنے والی مختلف متعدد ٹرینوں پر اچانک چھاپے مار کر ماہ جولائی میں 2271 بغیر ٹکٹ سفر کرتے ہوئے مسافر پکڑے لیے اور ان سے موقع پر کرایہ و جرمانہ کی مد میں (2396270) روپے وصول کرکے قومی خزانے میں جمع کروادیئے۔ڈی سی او ریلوے لاہور کا کہنا تھا کہ ڈی ایس ریلوے لاہور کی رہنمائی میں بغیر ٹکٹ مسافروں کے خلاف کریک ڈاون جاری رہے گا۔ ڈی سی او ریلوے لاہور نے مذید کہنا کہ بغیر ٹکٹوں کے خلاف جاری مہم کو موثر طریقے سے چلا رہے ہیں۔ ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ بغیر ٹکٹ سفر کرنے کے عادی مسافروں کے خلاف مزید چھاپہ مار ٹیمیں تشکیل دی جائیں گی تاکہ ریلوے کی ڈوبتی ہوئی ہر پائی کو وصول کیا جاسکے اور ساتھ ہی ساتھ بغیر ٹکٹوں کی حوصلہ شکنی بھی ہوتی رہے۔ یاد ریے ریلوے لاہور ڈویژن کی بغیر ٹکٹ مسافروں کے خلاف موثر حکمت عملی کو نہ صرف ڈویژن کی سطح پر بلکہ ہیڈکوارٹر کی سطح پر بھی سراہا جا رہا ہے،دریں اثناء ڈویژنل ٹرانسپورٹیشن آفیسر ریلوے لاہور ناصر نذیر نے پاکستان ایکسپریس پر اچانک چھاپہ مار کر ڈیوٹی سے غیر حاضرکنڈکٹر گارڑ کو موقع پر معطل کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق جب ڈویژنل ٹرانسپورٹیشن آفیسر ریلوے لاہور نے اچانک پاکستان ایکسپریس ٹرین پر چھاپا مارا تو کنڈکٹر گارڑ محمد طالب ٹرین میں موجود نہیں تھا جبکہ ڈیوٹی روسٹر چیک کروانے پر معلوم ہوا کہ محمد طالب کنڈکٹر گارڑ ڈیوٹی روسٹر کے مطابق پاکستان ایکسپریس ٹرین پر ڈیوٹی سرانجام دے رہا ہے۔ ڈی ٹی او ریلوے کا کہنا تھا کہ ٹرین سٹاف بلاواستہ مسافروں کی خدمت اور حفاظت کیلئے معمور کیا جاتا ہے۔ جب سٹاف ہی ٹرین پر موجود نہیں ہو گا تو مسافروں کی خدمت اور حفاظت کیسے ممکن ہوگی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1