حکومت بلوچستان زراعت کی بہتری کیلئے اقدامات اٹھا رہی ہے، جاوید ترین

حکومت بلوچستان زراعت کی بہتری کیلئے اقدامات اٹھا رہی ہے، جاوید ترین

کوئٹہ ( آن لائن ) ڈائریکٹر جنرل ریسرچ زراعت بلوچستان ڈاکٹر محمد جاوید ترین نے کہا کہ ملکی پیدوار بڑھانے کیلئے حکومت بلوچستان زراعت کے شعبوں میں بہتری لانے کیلئے جامعہ منصوبہ بندی کے تحت اقدامات اٹھارہی ہے زراعت کے لحاظ سے بلوچستان کی زمین مشہور ہے اور بلوچستان زرعی پیدوار سے نہ صرف پاکستان ملک دیگر ممالک بھی مستفید ہورہے ہیں نئے کوالٹی کے بیجوں پر بھی تجربہ جاری ہے انشاء اللہ بلوچستان میں ایسے فصلات اگائے جائیں گے جو نایاب ہونگے اور ملکی معیشت کیلئے کارآمد ثابت ہونگے وایارو ریسرج فارم میں افسران کی جدوجہد سے واضح تبدیلی آئی ہے اور فارم کا یہ میرا چوتھا دورہ ہے اور اب اس میں نئے پودوں کے تجربات بھی جاری ہیں ضلع لسبیلہ کے زمینداران کیلئے سیمینار کا اہتمام کیا جائے گا زمینداران محکمہ زراعت سے رابطے میں رہیں اور موسم کے مطابق فصلات کی کاشت کو ترجیحی دیں تاکہ زمینداران کو نقصان کا سامنا نہ ہو حکومت بلوچستان نے زراعت کیلئے پروجیکٹ دیئے ہیں انشاء اللہ آنیوالے دور میں زراعت ایک نئی سمت میں جائیگی زراعت میں لسبیلہ کا بھی کلیدی کردار رہا ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے وایارو ریسرج فارم اور لسبیلہ یونیورسٹی کے دورے کے بعد سرکٹ ہاؤس اوتھل میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ لسبیلہ میں زمینداران و ہمارے فارموں کو بجلی کی لوڈشیڈنگ کا سامنا ہے اور بجلی نہ ہونے کی وجہ سے زراعت تباہ ہورہی ہے جس سے ہر ایک آگاہ ہے اور انشاء اللہ حکومت بلوچستان ان تمام معاملات پر قابو پا کر زراعت میں واضح بہتری لائیگی زراعت بلوچستان کا ایک قیمتی سرمایہ ہے پوری دنیا میں موسم خراب ہے لیکن اس خراب موسم کے باوجود بھی زرعی پیدوار میں تجربات تدابیر استعمال کرنے سے بہتری آسکتی ہے

انہوں نے کہا کہ وایارو ریسرج فارم کیلئے اعلیٰ حکام سے بات کرکے نئی اسامیوں کا بھی اجراء کرایا جائے گا اور عملے کی کمی کی وجہ سے بھی مشکلات کا سامنا ہوتا ہے اور اور ایک کمیٹی ہوگی وہ ڈسٹرکٹ سطح پر امیدوار سے انٹرویو لیگی اور میٹرٹ پر بھرتیاں کی جائیگی انہوں نے کہا کہ زرعی یونیورسٹی اور محکمہ زراعت کا آپس میں چولی دامن کا ساتھ ہے اور ہم نے پرووائس چانسلر سے ملاقات کرکے ایک ایم آئی یو زراعت اور یونیورسٹی ریسرج میں معاہدہ کیا ہے طلباء کو موسم کے حوالے سے آگاہی دی جائیگی اور آنیوالے دور میں دوررس نتائج مرتب ہونگے انہوں نے کہا کہ ریسرج نے کافی نئی وارنٹی دی ہوئی ہیں جن کا کام آخری مراحل میں ہے اور ان بیجوں پر کامیاب تجربہ ہونے کا امکان ہے اور ان نئے نایاب فصلات سے ریسرج کو ایک ماڈل لائن میں لایا جائیگا انہوں نے کہا کہ زراعت کی بہتری کیلئے وفاق ودیگر صوبوں سے رابطے میں ہیں بلوچستان میں ریسرج زیادہ ہے اور دوسرے صوبے بھی مستفید ہونگے اور ملکی پیدوار میں بھی اضافہ ہوگا انہوں نے کہا کہ لسبیلہ یا پورے بلوچستان کے زمینداران مسلسل محکمہ زراعت ریسرج سے رابطے میں رہیں تاکہ زمینداران کو آگاہی مل سکے کہ کونسے موسم میں کونسا فصل کاشت کیا جاتا ہے اور پانی کی مقدار کے متعلق بھی آگاہی ملے تو یقیناًزمینداران کو نقصان نہیں بلکہ فائدہ پہنچے گا انہوں نے کہا کہ لسبیلہ میں کافی عرصے سے بارشیں نہ ہونے کے سبب پانی کا ضائع تبدیل ہونے کی اطلاعات ملی ہیں اور لسبیلہ کے پانی کے سینپل کوئٹہ میں لیبارٹری سے چیک کیئے جائیں گے اور اس معاملے بھی حل تلاش کیا جائے گا اس موقع پر ڈپٹی ڈائریکٹر وایارو فارم نعیم بلوچ ،عبدالغفور رونجھو ،شفیع محمد شیخ ودیگر افسران موجود تھے ۔

مزید : کامرس