سیاسی مفاہمت کی آڑ میں قوم سے مسلسل منافقت کی گئی: طاہر القادری

سیاسی مفاہمت کی آڑ میں قوم سے مسلسل منافقت کی گئی: طاہر القادری

لاہور( ایجوکیشن رپورٹر)پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر محمد طاہرالقادری نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن سمیت پوری قوم جانتی ہے کہ ہر امیدوار نے انتخابی مہم کے دوران 40 یا 20 لاکھ روپے کی بجائے کروڑوں روپے خرچ کیے، جماعتوں کی تشہیری مہم کا بجٹ اربوں میں تھا، ووٹوں کی خرید و فروخت بھی ہوئی، نقدیاں اور راشن بھی بانٹے گئے، انتخابی مہم کے دوران ایک گھنٹے میں 19لاکھ خرچ کرنیوالے کہہ رہے ہیں انہوں نے پورا الیکشن 19لاکھ میں لڑاجو سفید جھوٹ ہے، اس نظام میں جھوٹ، فراڈ، غلط بیانی کو ہضم کرنے کی لامحدود گنجائش ہے، الیکشن کمیشن سب جانتا ہے لیکن بول نہیں سکتا۔وہ گزشتہ روز اوسلو(ناروے) میں انسان کی روحانی ترقی کے موضوع پر منعقدہ کانفرنس کے بعد مقامی میڈیا اور اوورسیز رہنماؤں اور کارکنان کے وفود سے بات چیت کررہے تھے، ڈاکٹر طاہرالقادری نے کہا کہ سیاسی مفاہمت کی آڑ میں 3دہائیوں سے منافقت کی سیاست ہورہی ہے،عوام کو پینے کا صاف پانی، علاج اور تعلیم نہ دے سکنے والے بھی ملک اور جمہوریت کے درد میں کراہ رہے ہیں،انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتیں باقاعدہ ایک گینگ کی شکل اختیار کر چکی ہیں جن کے پیش نظر عوام کے مسائل حل کرنا نہیں بلکہ اقتدارحاصل کر کے خاندان، جماعت اور ذات کو مضبوط کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ سب اس لوٹ کھسوٹ،خوف اور لالچ پر مبنی نظام کی وجہ سے ہے،اسی لیے پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں نے اس نظام کو بدلنے کیلئے جانی، مالی قربانیاں دیں اور ہماری جدوجہد رکی نہیں،جامع اصلاحات کیلئے اپنا کردار ادا کرتے رہیں گے،انہوں نے کہا کہ دنیا کے ہر معاشرے میں ظلم کرنے والے، جائز، ناجائز طریقے سے کاروبار بڑھانے ،منافع کمانے اور میرٹ کے برعکس نوکریاں، ترقیاں اور تقرریاں چاہنے والے موجود ہوتے ہیں لیکن ایسے عناصر کو روکنے کیلئے ریاست قانون کی طاقت سے اپنا کردار ادا کرتی ہے اور انہیں ضوابط پر عمل کرنے پر مجبور کرتی ہے۔

طاہرالقادری

مزید : صفحہ آخر