درخت و پتھر نبی کریم ﷺ پر کیسے درود و سلام بھیجتے تھے ؟جانئے وہ طریقہ کہ جو ہر مسلمان کو زندگی کے سب سے بہترین عمل سے روشناس کراسکتا ہے

درخت و پتھر نبی کریم ﷺ پر کیسے درود و سلام بھیجتے تھے ؟جانئے وہ طریقہ کہ جو ہر ...
درخت و پتھر نبی کریم ﷺ پر کیسے درود و سلام بھیجتے تھے ؟جانئے وہ طریقہ کہ جو ہر مسلمان کو زندگی کے سب سے بہترین عمل سے روشناس کراسکتا ہے

  

رسول خدا ﷺ اللہ کے محبوب ترین نبی تھے ،آپ ﷺ کی شان نبوت یہ تھی کہ آپ سرکارﷺ جہاں سے گزر تے انسان و غیر انسانی قوتیں بھی آپﷺ پر سلام ا ور درود بھیجا کرتی تھیں ۔یہ اللہ کریم کی اپنی محبوب نبی سے محبت کا اظہار ہے کہ اللہ خود اپنے نبی پر درود و سلام بھیجتا اور اپنی مخلوقات کو بھی اسکی ہدایت فرمائی لیکن انسان ایسا ناقدرااور کج فہم ہے کہ وہ اللہ کی اس ہدایت پر عمل کی بجائے درود و سلام پر بحث شروع کردیتاہے ۔درود وسلام کی حکمت اور فضیلت میں ہر کسی کی بھلائی پوشیدہ ہے ،یہ ہر انسان کی زندگی کا بہترین عمل ہے جو اسے عشق نبی ﷺ سے مالا مال کرسکتا ہے۔احادیث مبارکہ میں اللہ کے نبیﷺ کے یہ معجزات بھی موجود ہیں کہ جب درختوں اور پتھروں نے بھی آپﷺ کو سلام کیا اور درود پڑھا ۔ امام ترمذیؒ، امام احمدؒ، امام ابو یعلیؒ اور طبرانیؒ لکھتے ہیں کہ حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا” مکہ مکرمہ میں ایک پتھر ہے جو مجھے بعثت کی راتوں میں سلام کیا کرتا تھا۔ میں اسے اب بھی پہچانتا ہوں۔“

ایک دوسری حدیث کو امام ترمذیؒ اور حاکمؒ نے روایت کیا ہے۔ الفاظ حاکم کے ہیں اور امام حاکم ؒ فرماتے ہیں کہ یہ حدیث صحیح الاسناد ہے۔اس حدیث میں بیان کیا گیا ہے کہ ....

حضرت علی رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں” ہم مکہ میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے ہمراہ تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم مکہ کے گرد و نواح میں گئے تو راستے میں جو پتھر اور درخت آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے سامنے آتا تو وہ کہتا” اَلسَّلَام عَلَیک یا رَسولَ اللہِ“ یا رسول اللہ! آپ پر سلام ہو۔“

پتھروں اور پہاڑوں کی جانب سے رسالت مآب ﷺ کی خدمت میں سلام کو امام بیہقیؒ نے بھی روایت کیا ہے کہ ”حضرت عباد رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں” میں نے حضرت علی رضی اللہ عنہ کو فرماتے ہوئے سنا”میں نے دیکھا کہ میں حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ والہ وسلم کے ساتھ فلاں فلاں وادی میں داخل ہوا۔ آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم جس بھی پتھر یا درخت کے پاس سے گزرتے تو وہ کہتا” اَلسَّلَام عَلَیکَ یا رَسولَ اللہِ“یا رسول اللہ! آپ پر سلام ہو‘ اور میں یہ تمام سن رہا تھا۔“

مزید : روشن کرنیں