عالمی مارکیٹ‘ سونے کے نرخ 1400  ڈالر سے زائدرہنے کی توقع

عالمی مارکیٹ‘ سونے کے نرخ 1400  ڈالر سے زائدرہنے کی توقع

  

لندن (اے پی پی) ماہرین نے کہا ہے کہ آئندہ سال (2020 ء) کے دوران عالمی مارکیٹ میں سونے کے نرخ 1400  ڈالر فی اونس سے زیادہ رہنے کی توقع ہے جس کی وجہ شرح سود میں کمی، سرمایہ کاروں اور مرکزی بینکوں کی جانب سے اس کی خریداری میں اضافہ ہے۔رائٹرز کی جانب سے جاری ایک 33 ماہرین اقتصادیات سے کیے گئے سروے کی جائزہ رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں قرضوں پر سود کی شرح میں کمی کے رجحان، اس قیمتی دھات کی سرمایہ کاروں اور مرکزی بینکوں کی جانب سے خریداری میں اضافے کے باعث 2020 ء میں سونے کے نرخ 1400 ڈالر فی اونس سے زیادہ رہنے کی توقع ہے۔ماہرین نے کہا کہ عالمی معیشت کو درپیش مشکلات کے باعث سرمایہ کار دنیا بھر میں سونے کی خریداری پر سرمایہ کاری کررہے ہیں کیونکہ یہ سرمایہ کاری کے لیے محفوظ راستہ ہے۔انھوں نے کہا کہ جون کے دوران سونے کے نرخ 1400 ڈالر فی اونس کی سطح سے تجاوز کرگئے جو کہ 2013 ء کے بعد اب تک کے سب سے زیادہ نرخ ہیں، توقع ہے کہ یہ نرخ برقرار رہیں گے تاہم ان میں بہت زیادہ اضافے کے امکانات نہیں ہیں۔ان کا کہنا تھا کہ رواں سال سونے کی اوسط قیمت 1351 ڈالر جبکہ 2020 ء میں 1433 ڈالر فی اونس رہنے کا امکان ہے۔ماہر اقتصادیات فرانک شیلن برجر نے مرکزی بینکوں کی جانب سے سونے کی خریداری اور قرضوں پر سود کی شرح میں کمی، سونے کی خریداری میں سرمایہ کاروں کی بڑھتی دلچسپی اس کے نرخوں میں اضافے کی بڑی وجوہات ہیں۔

مزید :

کامرس -