ایف بی آر کا فکس ٹیکس کا ڈرافٹ تاجر برادری کو قبول نہیں‘ میاں سلیم

 ایف بی آر کا فکس ٹیکس کا ڈرافٹ تاجر برادری کو قبول نہیں‘ میاں سلیم

  

لاہور(نیوز رپورٹر) انجمن تاجران لاہور کے جوائنٹ سیکرٹری و تاجر رہنما میاں سلیم نے کہا ہے کہ ایف بی آر کی طرف سے بنائے گئے فکس ٹیکس کا ڈرافٹ تاجر برادری کو قبول نہیں، اس میں بہت زیادہ قباحتیں ہیں،فکس ٹیکس کے مسودے میں ایک تو ریٹ بہت زیادہ ہے دوسرا اس کو رقبے کی بجائے کاروبار کی نوعیت اور نفع نقصان کی اہلیت کے مطابق ٹیکس کیٹیگری بنائی جائے، اس کے علاوہ ٹرن اوور اور ود ہولڈنگ ٹیکس کو ختم کیا جائے۔ یہ بات انہوں نے گزشتہ روز تاجروں کے ایک ا جلاس کے دوران شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ میاں سلیم نے کہا کہ حکومت کو اس بات کی یقین دہانی کرانی ہوگی کہ فکس ٹیکس کے بعد تاجروں کے سروں پر کوئی اور تلوار نہیں لٹکائی جائے گی۔ بلکہ تاجر برادری کی جانب سے پیش کردہ تجاویز کو مدنظر رکھتے ہوئے فکس ٹیکس کے معاملے پر مشاورت کی جائے۔ میاں سلیم نے کہا کہ شناختی کارڈ کی شرط کاروباری سرگرمیوں میں رکاوٹ ہے جس کی وجہ سے مینو فیچر،ڈسٹری بیوٹرز اور ہول سیلرز کو آرڈر ملنا قطعی طور پر بند ہو گئے ہیں جس کی وجہ سے پورے ملک کی معیشت کا پہیہ جام ہو گیا ہے۔ ڈسٹری بیوٹرز اور دکانداروں نے صنعتکاروں کا مال اٹھانا بند کر دیا ہے اور ریٹیلرز نے بھی خریداری بند کر دی ہے،مارکیٹوں میں لین دین مکمل طور پر بند کر دیا گیا ہے جس کی وجہ سے تمام مارکیٹوں میں جمود کی کیفیت طاری ہے۔ میاں سلیم نے کہا کہ ایف بی آر فوری طور پر شناختی کارڈ کی شرط ہر سطح پر ختم کرے

مزید :

کامرس -