اقوام متحدہ ہمارا نقشہ تسلیم کرلے تو مسئلہ حل ہوجائے گا، عارف علوی

  اقوام متحدہ ہمارا نقشہ تسلیم کرلے تو مسئلہ حل ہوجائے گا، عارف علوی

  

 اسلام آباد (این این آئی)صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے کہا ہے کہ اقوام متحدہ نے مسئلہ کشمیر پر اپنا کردار ادا نہیں کیا جس سے مایوسی ہوئی، اقوام متحدہ ہمارا نقشہ تسلیم کرلے تو مسئلہ حل ہو جائے گا۔ایک انٹرویومیں صدر مملکت کا کہنا تھا کہ بھارتی مظالم سے دنیا کو آگاہ کر رہے ہیں۔ بھارت میں نفرتیں بڑھ رہی ہیں۔ وہاں کی حکومت اپنی تاریخ خود مسخ کر رہی ہے۔ڈاکٹر عارف علوی کا کہنا تھا کہ کشمیر میں خواتین پر ظلم کیا گیا، بھارت نے نازی قسم کی سیاست اور پیلٹ گن کا استعمال اسرائیل سے سیکھا، بھارت کشمیر میں مظالم بڑھا رہا ہے،مودی حکومت نے حالات خراب کیے لیکن وہ اپنے عزائم میں کامیاب نہیں ہوگی۔صدر مملکت نے کہا کہ اقوام متحدہ کا ادارہ 1945ء میں بنا جہاں بھارت خود کشمیر کا معاملہ لے کر گیا تھا۔ اگر مقبوضہ کشمیر میں سب کچھ ٹھیک ہے تو بھارت عالمی میڈیا کو اجازت کیوں نہیں دیتا؟ان کا کہنا تھا کہ کشمیر مسئلے پر ہم سب اکٹھے ہیں۔ کشمیر مسئلے پر ہم سب نے اپنا اپنا رول ادا کرنا ہے،بدھ کے روز سینیٹ میں مجھے دعوت دی گئی ہے، کسی صدر کو سینیٹ کی دعوت پہلا موقع ہے۔انہوں نے کہا کہ بھارتی غیر قانونی اقدام پر چین نے واضح موقف اختیار کیا جبکہ ترکی، چین اور ملائیشیا نے بھی پاکستان کو کشمیرمعاملے پر سپورٹ کیا۔صدر نے کہاکہ سوشل میڈیا تیز ترین فورم ہے۔ وزیراعظم عمران خان سے کہا ہے کہ کشمیر کاز کو سوشل میڈیا پر زیادہ اجاگر کیا جائے۔

 عارف علوی

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے دنیا کا مقابلہ کرنے کیلئے مصنوعی ذہانت اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نظم ونسق اور سائنس کے درمیان تعاون سے ملک ترقی کر سکتا ہے۔ انٹرنیٹ، آن لائن کی سہولت اور مصنوعی ذہانت کے ذریعے چوتھے صنعتی انقلاب نے طرز زندگی تبدیل کر دیا ہے کیونکہ ان ٹیکنالوجیز نے ناصرف روابط بلکہ پیداواری عمل کو بھی فروغ دیا ہے۔انہوں نے وزارت سائنس و ٹیکنالوجی پر زور دیا کہ وہ زرعی شعبے میں پیداوار بڑھانے کیلئے ڈرون اور ربوٹ سمیت جدید ٹیکنالوجی بروئے کار لانے کیلئے کام کرے۔ صدر نے کہا کہ ہمیں اپنے انسانی سرمائے کو ترقی دینی چاہیے جو جدید ٹیکنالوجی کی مصنوعات تیار کر سکتا ہے۔

صدر مملکت

مزید :

صفحہ آخر -