نشتر میں فوری طور پر وی سی تعینات کیاجائے، مسعود ہراج

نشتر میں فوری طور پر وی سی تعینات کیاجائے، مسعود ہراج

  

ملتان (وقا ئع نگار)نشتر میڈیکل یونیورسٹی زبوں حالی کا شکار، مستقل وائس چانسلر کی تعیناتی نہ ہونے سے جنوبی پنجاب کی واحد بڑی علاج گاہ مسائلستان بن گئی، پرائمری اینڈ سیکنڈری کئیر ہسپتالوں میں بھی ڈاکٹروں کی بھرتی ممکن نہ ہو سکی،کورونا وبا کے ہیروز کو کورونا الاونس تک نہ جاری کیا جا سکالیکن تنخواہوں سے چھٹیوں پر کٹوتی شروع ہوگئی،ان خیالات کا اظہارپاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کے رہنما ڈاکٹرز نیپریس کانفرنس کے دوران کیا پی ایم اے ملتان کے صدر(بقیہ نمبر6صفحہ6پر)

 پروفیسر ڈاکٹر مسعود الرف ہراج نیڈاکٹر رانا خاور،ڈاکٹر شیخ عبد الخالق،ڈاکٹر ذوالقرنین حیدر،ڈاکٹر وقار نیازی و دیگر عہدیداران کے ہمراہ پریس کلب ملتان میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ بننے کے بعد بھی خطے کے اداروں اور عوام الناس کا استحصال جاری ہے جس کی مثال یہ ہے کہ جنوبی پنجاب کی واحد نشتر میڈیکل یونیورسٹی ایک سال سے زائد عرصہ گزرنے کے باوجود مستقل وائس چانسلر کی تعیناتی سے محروم ہے مستقل وائس چانسلر نہ ہونے سے ادارہ زبوں حالی کا شکار ہے فیکلٹی کی کمی نئے کورسز کا اجرا ہاسٹلز اور کالج و اہسپتال کے مسائل میں ہر گزرتے دن کے ساتھ اضافہ ہو رہا ہے، تاریخ میں ایسی مثال نہیں ملتی کہ پنجاب بھر کی کسی بھی یونیورسٹیمیں اتنے عرصہ تک مستقل وائس چانسلر کی سیٹ خالی ہو، ڈاکٹر اور مریض کے مسائل کو دیکھتے ہوئے پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن ملتان وزیراعلی پنجاب گورنر پنجاب وزیر صحت اور جنوبی پنجاب ملتان کے اراکین اسمبلی سے پرزور مطالبہ کرتے ہیں کہ نشتر میڈیکل یونیورسٹی میں فی الفور مستقل وائس چانسلر تعینات کیا جائے تاکہ ادارہ کا تحفظ ہو سکیہم میڈیا کے توسط سے حکام بالا سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ پرائمری اور سیکنڈری ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ کے ہسپتالوں میں عرصہ دراز سے ڈاکٹرز کی خالی سیٹوں پر تعیناتی کے مسائل کی جانب اپنی توجہ مبذول کرے دیگر اضلاع کے برعکس گزشتہ دو سال سے ضلع ملتان میں موجود خالی آسامیوں پرایڈہاک پر ڈاکٹرز کی بھرتی نہیں ہو سکی ایک بار انٹرویو ہونے کے باوجود ڈپٹی کمشنر کے تبادلے کی وجہ سے دوبارہ نئے ڈپٹی کمشنر کی زیر سرپرستی تقریبا دو ماہ پہلے انٹرویو کا انعقاد ہوا لیکن تاحال سلیکٹ ہونے والے امیدواروں کی لسٹیں ضلعی انتظامیہ کی جانب سے سیکرٹری کو تعیناتی کے لیے نہیں بھجوائی جاسکی ہیں، کمشنر ملتان ڈپٹی کمشنر ملتان اور سی ای او ہیلتھ ملتان سے ہمارا مطالبہ ہے کہ فوری طور پر اس عمل کو مکمل کیا جائے تاکہ ڈاکٹرز کو روزگار مہیا ہو اور ہسپتالوں میں ڈاکٹرز کی کمی پوری کی جا سکے، حالیہ ہیلتھ اور فنانس ڈیپارٹمنٹ کے نوٹیفکیشن کے مطابق ڈاکٹرز کی تنخواہوں سے چھٹیوں پر الانس کی کٹوتی کی ہم پر زور مذمت کرتے ہیں اگر دیگر محکموں کے افسران کی چھٹیوں پر کٹوتی نہیں ہوتی تو ڈاکٹر جو کہ کرونا وبا میں فرنٹ لائن پر کام کرتے رہتے ہیں ان کی تنخواہوں سے بلا جواز کٹوتی بند کر دی جائے اور اس فیصلے پر نظر ثانی کی جائے. ٹیچنگ ہسپتالوں میں فیکلٹی کی کمی کے پیش نظر لوکل انتظامیہ نے جن ڈاکٹرز کو تعلیمی قابلیت اور تجربہ پورا ہونے پر Designate کیا تھا سیکرٹری ہیلتھ نے حقائق سے پردہ پوشی کرتے ہوئے اس پر پابندی عائد کر دی ہے جس سیدیگر اداروں کی پاکستان میڈیکل کونسل رجسٹریشن خطرے میں پڑگئی ہے،سیکرٹری ہیلتھ سے ہمارا مطالبہ ہے کہ اس فیصلے کو فی الفور واپس لیا جائے تاکہ ڈاکٹرز میں پائے جانے والی بے چینی کو ختم کیا جا سکے نشتر انتظامیہ نے ڈپلومہ کورسز کے ضمن میں جس ستی اور بے حسی کا مظاہرہ کیا ہے اس سے ڈاکٹرز کی کمی اور شدید ہوگئی ہے ہم اس کی بھی بھرپور مذمت کرتے ہیں۔

مسعود ہراج

مزید :

ملتان صفحہ آخر -