نابینا افراد کا دھرنا ، حکومت پنجاب کے خلاف نعرے بازی

نابینا افراد کا دھرنا ، حکومت پنجاب کے خلاف نعرے بازی

لاہور (لیڈی رپورٹر ) پنجاب بھر سے آئے ہوئے نابینا ملازمین نے پنجاب حکومت کی بے حسی، مسائل حل نہ کرنے اور 3 سال سے لالی پاپ دینے کے خلاف پریس کلب کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیا اور دھرنا دیا ۔مظاہرین نے پنجاب حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی،وزیر اعلیٰ سے مطالبات تسلیم کرنے اور فوری احکامات جاری کرنے کی اپیل کی ۔پنجاب کے تمام ڈویژنوں اور اضلاع سے درجنوں نابینا ملازمین لاہور پریس کلب کے سامنے جمع ہوئے اور حکومت کے خلاف نعرے بازی شروع کر دی ، ملازمین نے کہا کہ حکومت تین سال سے نابینا افراد کے ساتھ کھلواڑ کر رہی ہے مسائل حل کرنے کی بجائے لالی پاپ دے رہی ہے ، بار بار جھوٹے وعدے کئے جاتے ہیں ، یقین دہانیاں کرائی جاتی ہیں لیکن مسائل حل نہیں کئے جاتے ، نابینا ملازمین کے پریس کلب کے سامنے دھر نا سے ٹریفک رک گئی ڈیوس روڈ پر ٹریفک کا نظام بری طرح متاثر رہا ۔اس موقع پر نبیل ستی اور محمد فیاض نے کہاکہ پنجاب حکومت آج تک نابینا افراد اور نابینا ملازمین کے حوالے سے کوئی پالیسی تشکیل نہیں دے سکی جس کی وجہ سے ہمارے مسائل حل نہیں ہو سکے ان میں روزبروز اضافہ ہوتا جا رہا ہے ۔ ہمارے چند مطالبات ہیں حکومت پنجاب تین سال سے ہمیں جھوٹے وعدوں پر ٹرخا رہی ہے، نابینا افراد اپنے حق کے لئے بڑی مشکلوں سے لاہور اکٹھا ہوتے ہیں۔حکومت کبھی لاٹھی چارج کرا دیتی ہے اور کبھی لالی پاپ دے کر بھیج دیتی ہے مگرمسائل حل کرنے میں سنجیدہ نہیں ۔ سرکاری ملازمتوں میں نابینا افراد کا 3 فیصد کوٹہ ہے لیکن حکومت عملدرآمد نہیں کرارہی پنجاب بھر میں نابینا کوٹہ کی ہزاروں پوسٹیں خالی پڑی ہیں صرف راولپنڈی ڈویژن میں نابینا کوٹہ کی؂ 710 پوسٹیں خالی ہیں۔ حکومت کسی نابینا شخص کو سرکاری ملازمت دینے کو تیار نہیں ۔ پنجاب میں اس وقت 900 نابینا ملازمین ڈیلی ویجز کام کر رہے ہیں لیکن آج تک انہیں ریگولر نہیں کیا گیا جس کی وجہ سے وہ عدم تحفظ کا شکار ہیں ۔ دیگر ملازمین کو حکومت ہر سال ریگولر کر رہی ہے ، دوسری طرف پنجاب حکومت نے نابینا افراد کے بطور ٹیچر بھرتی پر پابندی لگا رکھی ہے جو بنیادی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے ۔ پنجاب حکومت نابینا افراد کی بھرتی میں 10 سال عمر کی رعایت دینے کے بلند و بانگ دعوے کر رہی ہے جبکہ یہ رعایت پرویز مشرف کے دور میں 2002 میں دی گئی جسے موجودہ حکومت اپنے کریڈٹ میں ڈال رہی ہے ۔ پنجاب حکومت یہ بھی دعوے کر رہی ہے کہ معذور افراد کو 88 ہزار خدمت کارڈ جاری کر دئے ہیں جو سراسر جھوٹ ہے پنجاب بھر میں 800 معذور لوگوں کو بھی خدمت کارڈ نہیں ملا ہو گا۔نابینا رہنماؤں کا کہنا تھاکہ وہ 2014 ء سے حقوق کے لئے مظاہرے کر رہے ہیں لیکن حکومت ٹس سے مس نہیں ہو رہی ، ہر دفعہ کوئی نیا چہرہ پنجاب حکومت کا نمائندہ بن کر آ جاتا ہے اور مسائل حل کرنے کی یقین دہانی کرا کر احتجاج ختم کرا دیتا ہے لیکن آج تک کوئی ریلیف نہیں مل سکا ، ۔مظاہرین نے وزیر اعلیٰ پنجاب ، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ ، چیف جسٹس سپریم کورٹ سے اپیل کی کہ انہیں ان کاحق دلایا جائے ۔

نا بینا افراد

مزید : صفحہ آخر