ماضی کا تعلیمی نظام تباہی پر مبنی تھا ،پرویز خٹک

ماضی کا تعلیمی نظام تباہی پر مبنی تھا ،پرویز خٹک

پشاور(این این آئی) وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہاہے کہ ماضی کا تعلیمی نظام تباہی پر مبنی تھا جس نے ترقی کے مواقع روک دیئے تھے ۔وہ نظام اتنا سیاست زدہ تھا کہ تبادلے اور تعیناتیاں بھی سیاسی لوگوں کی ایماء پر ہوتی تھیں یہی وجہ ہے کہ اُن کی حکومت نے تعلیم کو سیاسی طبقے کے ا ثر رسوخ سے مکمل طور پر آزاد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ پرویز خٹک نے واضح کیا کہ صوبائی حکومت تعلیمی اداروں میں تمام بنیادی سہولیات کی فراہمی یقینی بنانے کے علاوہ معیار تعلیم پر بھی سمجھوتہ نہیں کرے گی۔ انہوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ ماضی کے حکمرانوں نے تعلیم کے معیار پر توجہ دینے کی بجائے سیاسی بنیادوں پر سکول و کالج بنائے جن میں بنیادی سہولیات اور مطلوبہ ساز وسامان و ضروریات کی فراہمی کو بھی ضروری نہیں سمجھا گیا جس کی وجہ سے یہ تعلیمی ادارے دیگر خامیوں کے علاوہ کھنڈرات کی شکل پیش کرنے لگے تھے تاہم پی ٹی آئی کی حکومت نے بر سراقتدار آنے پر نہ صرف معیار تعلیم کی بہتری بلکہ پہلے سے موجود تعلیمی اداروں کی حالت بہتر بنانے کا بیڑا بھی اٹھایا اور اس کیلئے وسائل کا بڑا حصہ مختص کیا گیا۔ وہ وزیر اعلیٰ ہاؤس پشاور میں عبدالولی خان یونیورسٹی مردان کے مالی اور انتظامی معاملات اور مسائل کے حل سے متعلق اجلاس کی صدارت کر رہے تھے جس میں صوبائی وزیر محمد عاطف خان، وزیر اعلیٰ کے مشیر برائے اعلیٰ تعلیم مشتاق غنی ، سیکرٹری اعلیٰ تعلیم سید ظاہر علی شاہ،سیکرٹری خزانہ شکیل قادر، چیف پلاننگ آفیسر محمد زمان خان مروت، عبدالولی خان یونیورسٹی کے وائس چانسلرمحمد خورشید خان، وزیر اعلیٰ کے سپیشل سیکرٹری اختر سعید ترک اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔

پرویزخٹک

مزید : علاقائی